قاضی عبدالقدیر خاموش کا تحفظ حقوق نسواں بل کی حمایت کا اعلان

قاضی عبدالقدیر خاموش کا تحفظ حقوق نسواں بل کی حمایت کا اعلان

  

لاہور(نمائندہ خصوصی)جمعیت علما اہلحدیث پاکستان کے سربراہ قاضی عبدالقدیر خاموش نے تحفظ حقوق نسواں بل کی حمایت کا اعلان کرتے ہوئے کہا ہے کہ مخالفت برائے مخالفت کے عادی افراد سے مذاکرات کرنے کی بجائے، دانشوروں کے ذریعے لوگوں کے تحفظات دور کئے جائیں ۔ مرکزی مجلس عاملہ کے اجلاس کی صدارت کرتے ہوئے قاضی عبدالقدیر خاموش نے کہا کہ تحفظ حقوق نسواں بل اسلامی اور آئینی ہے، مخالفت صرف خواتین کے حقوق کو پائمال کرنے والے اور اسلام کے عورت کو دیے گئے تقدس کو مجروح کرنے والے ذاتی اغراض کی بنیاد پر کررہے ہیں۔ انہوں نے کہا کہ تحفظ حقوق نسواں بل اور دہشت گردوں کے خلاف ضرب عضب کی حمایت موجودہ حکومت کے واحد اقدامات ہیں، جن کی تحسین میں بخل سے کام نہیں لینا چاہیے۔ان کا کہنا تھا کہ تحفظ حقوق نسواں بل ان تمام افراد کی روح کی پکار اور ترجمانی ہے،جو اپنے گھر میں جنم لینے والی بیٹی ، بہن اور ماں کو وہ درجہ دیتے ہیں ، جو نبی رحمت حضرت محمد مصطفی صلی اللہ علیہ وسلم نے عطا فرمایا تھا۔ قاضی عبدالقدیر خاموش نے کہا کہ حکومت کو پسپائی اختیار کرنے کی بجائے، اپنی صفوں میں موجود دانشوروں پر مشتمل کمیٹی بنانی چاہیے جو لوگوں کے تحفظات دور کرے ، مخالفت برائے مخالفت کے عادی افراد سے مذاکرات کی ضرورت نہیں۔ انہوں نے مطالبہ کیا کہ پنجاب حکومت کی طرز پر باقی تمام قوانین قرآن و سنت کے مطابق نہیں، انہیں بھی پارلیمنٹ کے ذریعے اسلامی قالب میں ڈھالا جائے۔

مزید :

میٹروپولیٹن 1 -