مقبوضہ کشمیر میں بھی طوفانی بارشوں کا سلسلہ جاری ،نشیبی علاقے زیر آب،متعدد علاقوں فلڈ وارننگ جاری

مقبوضہ کشمیر میں بھی طوفانی بارشوں کا سلسلہ جاری ،نشیبی علاقے زیر آب،متعدد ...

  

سری نگر ( اے این این ) مقبوضہ کشمیر میں طوفانی بارشوں کا سلسلہ جاری ٗنشیبی علاقے زیر آب ٗ متعدد علاقوں میں فلڈ وارننگ جاری ٗ سانبہ سیکٹرمیں آسمانی بجلی گرنے سے دو فوجی اہلکار ہلاک ٗ تین جھلس کر شدید زخمی ٗ کپواڑہ میں برفانی تودے کی زد میں آنے والے 73 افراد کو زندہ بچا لیا گیا ٗ محفوظ مقام پر منتقل ٗ متاثرہ افراد میں خواتین اور بچے بھی شامل ہیں ٗ لینڈ سلائیڈنگ کے باعث متعدد رابطہ سڑکیں بند ٗ سری نگر جموں شاہراہ کو دو روز بعد گاڑیوں کی آمدورفت کیلئے کھول دیاگیا ٗ ادھم پور میں زمین سرکنے کے باعث تعلیمی ادارے ہنگامی طورپر بند کردیئے گئے ٗ محکمہ موسمیات نے آئندہ دو روز تک مزید بارشوں کی پیش گوئی کردی ۔ تفصیلات کے مطابق مقبوضہ کشمیر میں طوفانی بارشوں اور برف باری کا سلسلہ تاحال جاری ہے ۔گزشتہ دو روز کے دوران نہ صرف جواہر ٹنل کے آر پار موسلا دھار بارشیں ہوئیں بلکہ بالائی علاقوں میں تازہ برف باری بھی ہوئی اور کچھ ایک جگہوں سے بھاری برف باری کی اطلاعات ملی ہیں۔بارہمولہ، کپوارہ، بانڈی پورہ اور گاندربل کے پہاڑی علاقوں کے ساتھ ساتھ شوپیان، اننت ناگ اور کولگام کے بالائی مقامات پر بھی تازہ برف باری ہوئی ہے۔اس دوران سرینگر سمیت میدانی علاقوں میں جم کر بارشیں ہوئیں جس کے نتیجے میں معمول کی زندگی بر ی طرح سے متاثر رہی۔اسی طرح کی اطلاعات کرناہ کپوارہ سے بھی موصول ہوئی ہیں۔ فوج نے اپنے ایک بیان میں کہا ہے کہ ٹنگڈار کرناہ کے ناستا چھن پاس کے مقام پر برفانی تودہ گرآنے کے بعد درجنوں افراد پھنس گئے۔بیان کے مطابق اطلاع ملتے ہی راشٹریہ رائفلز کے مقامی یونٹ سے وابستہ اہلکاروں نے بچا کارروائی شروع کی اور مجموعی طور73افراد کو بحفاظت وہاں سے نکالا جن میں بچے اور خواتین بھی شامل تھیں۔کپوارہ میں شدید بارشوں اور برف باری کی وجہ سے کپوارہ کیرن اور کپوارہ مژھل سڑکیں بھی گاڑیوں کی آمد رفت کیلئے بند ہو کر رہ گئی ہیں جبکہ کرناہ کپوارہ شاہرہ کو بحال کر دیا گیا ہے ۔ دریں اثنامحکمہ موسمیات کا کہنا ہے کہ ریاست بالخصوص وادی میں بارشوں کا سلسلہ اتوار کی دوپہر تک جاری رہنے کا امکان ہے اور اسکے بعد ہی موسم میں بہتری واقع ہوگی۔بانہال میں میں شدید بارشوں کے نتیجے میں ایک پہاڑی سے گرآنے والی کیچڑ اور پتھروں سے بھری پسی نے ایک دو منزلہ رہائشی مکان کو اپنی لپیٹ میں لیا جس کی وجہ سے مکان کو زبردست نقصان پہنچا ہے ۔ مقامی سرپنچ محمد رفیق نے کشمیر عظمی کو بتایا کہ لینڈ سلائیڈنگ کے باعث مقامی لوگ جائے حادثہ کی طرف دوڑ پڑے اور انہوں نے بڑی ہمت اور بہادری سے وقت ضائع کئے بغیر اس گھر میں رہائش پذیر چار کنبوں کے 14 افراد کو بحفاظت باہر نکال لیا ۔ اس دوران جموں سرینگر شاہراہ کو جمعہ کی شام سے مختلف مقامات پر پسیوں اور پتھروں کے گر آنے کی وجہ سے 12 گھنٹوں تک بند رہنے کے بعد سنیچر کو دوبارہ گاڑیوں کی دو طرفہ آمدوفت کیلئے بحال کردیا گیا ہے۔ادھر مہور سے ریاسی اور راجوری کی طرف جانے والی دو سڑکیں بھی مٹی کے تودے اور پتھر کھسکنے کی وجہ سے بند کردی گئی ہیں۔معلوم ہوا ہے کہ راجوری، پونچھ ،ریاسی، ڈوڈہ اور جموں خطے کے دیگر علاقوں میں بھی تیز بارشوں کا سلسلہ جار ی رہاجموں کے سانبہ ضلع میں ہند پاک بین الاقوامی سرحد پر بارشوں کے دوران بجلی گرنے کے واقعہ میں فوج کا دو اہلکار ہلاک اور دو دیگر زخمی ہوگئے۔پولیس ذرائع نے بتایا کہ رام گڑھ سیکٹر میں ابتال روڑ کے نزدیک ناکہ ڈیوٹی پر تعینات فوجی اہلکار آسمانی بجلی کی زد میں آگئے جس کے نتیجے میں سپاہی جے پال ساکن کلو موقعہ پر ہی ہلاک نائیک راج کمار ساکن میر پور کٹھوعہ اور نائیک انیل کمار ساکن پٹھانکوٹ پنجاب شدید زخمی ہوئے اور انہیں فوری طور اسپتال منتقل کیا گیا۔

مزید :

علاقائی -