حقوق نسواں بل ملک کو لبرل بنانے کی سازش ہے، ڈاکٹر وسیم اختر

حقوق نسواں بل ملک کو لبرل بنانے کی سازش ہے، ڈاکٹر وسیم اختر

  

بہاولپور( ڈسٹرکٹ رپورٹر) جماعت اسلامی کے پارلیمانی لیڈر پنجاب اسمبلی ڈاکٹر سید وسیم اختر نے کہا ہے کہ پنجاب اسمبلی میں منظور ہونے والا حقوق نسواں بل بھی اس ملک کو لبرل بنانے کی سازش ہے جو کسی صورت برداشت نہیں کیا جائیگا وہ مقامی ہو ٹل میں خواتین کے عالمی دن کے سلسلہ میں جماعت (بقیہ نمبر9صفحہ12پر )

اسلامی حلقہ خواتین کے زیر اہتمام منعقدہ کنونشن سے خطاب کر رہے تھے انہوں نے کہا کہ حقوق نسواں بل اسلام سے متصادم ہیں اور یہ معاشرے میں انتشار کا باعث بنے گا اور یہ بل خاندان کوجوڑنے کی بجائے توڑنے کا موجب بنے گا ڈاکٹر سید وسیم اختر نے وزیر اعظم پاکستان کی جانب سے پاکستان کو لبرل پاکستان بنانے کے بیان پر شدید رد عمل کا اظہار کرتے ہوئے کہا کہ اس ملک کا مستقبل لبرل پاکستان میں نہیں بلکہ اسلامی پاکستان خوشحال پاکستان میں ہے انہوں نے کہا کہ ملک میں کسی بھی مکتبہ فکر کے عالم دین نے اس بل کی حمایت نہیں کی ملک میں آئینی ادارہ قومی نظریاتی کونسل موجود ہیں پہلے اس بل کو وہاں بجھوایا جاتا تاکہ اس بل کی اسلامی و شرعی حیثیت دیکھی جاتی مگر حکمران کو مغربی استعمار کی خوشنودی کے لیے ہر حد کو کراس کرنے پر تلے ہوئے ہیں مگر حکمران سن لیں کہ جب تک ہمارے سر قائم ہیں کوئی بھی اس ملک میں اسلامی نظام کے علاوہ کوئی مغرب کا عطاء کردہ نظام نہیں لا سکتا ۔تقریب سے جماعت اسلامی کی رکن صوبائی شوری ڈاکٹر ثمینہ روحی نے خطاب کرتے ہوئے کہا کہ اس بل سے معاشرے میں فساد برپا ہو گا اور ملک میں بے حیائی کو فروغ ملے گا ۔

مزید :

ملتان صفحہ آخر -