بلاول کا اشارہ شہریار آفریدی ، شیخ رشید اور اسد عمر کی طرف تھا

بلاول کا اشارہ شہریار آفریدی ، شیخ رشید اور اسد عمر کی طرف تھا
بلاول کا اشارہ شہریار آفریدی ، شیخ رشید اور اسد عمر کی طرف تھا

  

تجزیہ؛۔ ایثار رانا

پیپلز پارٹی کے چیئرمین بلاول زرداری نے جہاں اپنی پریس کانفرنس میں حکومت پر الزامات عائد کئے وہیں انہوں نے یہ الزام بھی لگایا کہ حکومت کے 3 وزیروں کے کالعدم جماعتوں سے تعلقات ہیں۔انہوں نے وزیر اعظم عمران خان سے یہ مطالبہ بھی کیا کہ وہ ان 3 وزیروں سے استعفیٰ لیں۔بلاول زرداری کی جانب سے ان وزراء کے نام نہیں لئے گئے تاہم انہوں نے اپنی گفتگو میں اس جانب اشارے ضرور کئے ۔یہ تین وزرا کون ہیں ،سیاسی حلقوں میں اس بارے میں دلچسپ بحث جاری رہی۔ان میں سے ایک وزیر تو شہر یار آفریدی قرار دئے جا رہے ہیں جن کی ایک ویڈیو بھی وائرل ہوئی جس میں وہ ایک کالعدم تنظیم کے عہدیداروں کے ساتھ گفتگو کرتے اور انہیں تحفظ کی یقین دہانی کراتے نظر آتے ہیں۔دوسرے وزیر شیخ رشید ہیں جن کی لال حویلی میں کالعدم تنظیموں کے عہدیداروں سے ملاقاتیں اور گفتگو کوئی ڈھکی چھپی نہیں ہے۔تیسرے وزیر اسد عمر قرار دیے جا رہے ہیں جن کے کالعدم تنظیموں کے عسکری ونگ کے رہنماؤں سے تعلقات اور رابطے ڈھکے چھپے نہیں۔ سیاسی اور صحافتی حلقوں کا کہنا ہے کہ بلاول زرداری کی جانب سے گو ان وزرا کا نام نہیں لیا گیا لیکن وزیر اعظم عمران خان اور پاکستان کے ادارے ان تعلقات اور رابطوں سے آگاہ ہیں۔تاہم کچھ ذرا ئع کا یہ بھی کہنا ہے کہ ان کالعدم قرار د ی جانیوالی تنظیموں کو کسی حوالے سے دہشت گرد تنظیم قرار نہیں دیا جا سکتا۔اور نہ ہی آج تک اس حوالے سے کوئی دہشت گردی ثابت ہوئی ہے۔بلاول بھٹو کی جانب سے آج حکومت اور اس کے وزرا پر کالعدم تنظیموں سے رابطوں کے الزام کے بعد وہ انٹرنیشنل ادارے اور ممالک جو ہر حال میں پاکستان کیلئے مشکلات پیدا کرنا چاہتے ہیں ان کو بلاول زرداری کی جانب سے جو کہ پاکستان کی بڑی سیاسی جماعت کے سربراہ ہیں اتنے سنگین الزامات کے بعد پراپیگنڈا کا موقع ملے گااور ان کی گزشتہ روز کی گفتگو عمران حکومت کو انٹرنیشنل سٹیج پر مشکالات کا شکار کرنے کی ایک کوشش قرار دی جا سکتی ہے۔

مزید : تجزیہ