سیدات لیڈیز کلب ریاض کی جانب سے رنگا رنگ تقریب

سیدات لیڈیز کلب ریاض کی جانب سے رنگا رنگ تقریب
سیدات لیڈیز کلب ریاض کی جانب سے رنگا رنگ تقریب

  

ریاض (وقار نسیم وامق) سیدات لیڈیز کلب ریاض کی جانب سے رنگا رنگ تقریب کا اہتمام کیا گیا جس میں پاکستانی اور انڈین خواتین کے علاوہ دیگر ممالک کی خواتین کی بڑی تعداد شریک ہوئی جبکہ بچوں کی بڑی تعداد بھی شریک تھی.

پاک ہاوس میں منعقد ہونے والی تقریب میں خواتین نے پاکستانی کلچر کو خوب نمایاں کیا اور پاکستانی ملبوسات پہن کر تقریب میں شرکت کی اس کے علاوہ بچوں کی جانب سے تقریری مقابلے ہوئے جن میں بچوں نے مختلف موضوعات پر تقاریر کیں جبکہ بچوں اور بچیوں نے پاکستان کے ملی نغمے بھی گائے اور حاضرین میں جذبہ حب الوطنی بیدار کیا اس کے علاوہ خواتین نے بھی گائیکی کی محفل سجائی اور خوب من پسند گیت گا کر خواتین کو محظوظ کیا، کوئز پروگرام کے ذریعے سوالوں کے جوابات دینے والوں کو انعامات سے بھی نوازا گیا اسٹیج کو خواتین نے اپنی بھرپور صلاحیتوں اور مہارت کے ساتھ سجایا ہوا تھا جس میں دور حاضر اور قدیم دور کے مطابق ماڈلز بنائے گئے تھے .

تقریب سے خطاب کرتے ہوئے سیدات لیڈیز کلب کی سربراہ ام ابراہیم کا کہنا تھا کہ ہم نے ہمیشہ یہ کوشش کی ہے کہ خواتین کو ایسا پلیٹ فارم مہیا کیا جاے جس میں خواتین اور بچے بہتر انداز میں تفریح حاصل کر سکیں اس کے علاوہ گزشتہ کئی دنوں سے پاک بھارت کے مابین تناو کی صورتحال کے پیش نظر یہاں پر مقیم پاکستانیوں اور انڈین کیمونٹی بھی پریشانی کا شکار رہی اور اس اعتبار سے اس بار ہم نے پاکستانی خواتین کے ساتھ ساتھ انڈین خواتین کو بھی مدعو کیا تاکہ ہم یہاں سے محبت اور امن کا پیغام دیں تاکہ دونوں ملکوں کے سیاست دان نفرت کی بجائے باہمی رواداری اور اچھے ہمسائے ہونے کا ثبوت دیں یہ دور جنگوں کا نہیں بلکہ اپنی آنے والی نسلوں کے روشن مستقبل دینے کا وقت ہے ہمیں دنیا بھر میں امن قائم کرنے کے لئے ہر ممکنہ کوشش کرنی چاہئیے اور امن کی جانب بڑھنے والے قدم کا ساتھ دینا چاہئیے تاکہ صرف ہندوستان یا پاکستان ہی نہیں پوری دنیا محبت اور امن کا گہوارہ بن جائے،تقریب میں موسیقی کا مقابلہ جیتنے والی خواتین نازیہ صفدر، ماہا اعجاز علی، ام علی کو انعامات دئیے گئے.

لیڈی اف دا ایوننگ کے لئے عائشہ اقبال، عاطیقہ اسد،امرین ،فرہین فراز اور عائشہ کو قرار دیا گیا جھنوں نے عروسی ملبوسات کے علاوہ میک اپ اور ہئیر سٹائل کی کٹیگری کو بہتر انداز میں نبھایا تھا،تقریب کے آخر میں شرکاء کو پرتکلف عشائیہ بھی دیا گیا.گروپ ایڈمن جن میں سرفہرت منزہ اختر، فزا فاطمہ ،آمنہ نئیر، نصرت خان ، صائمہ عبید ، شازیہ وحید اور عنبرین عرف افی بین شامل ہیں.اور گروپ ایڈمن کے ساتھ اس گروپ کی مختلف زمہ داریوں کو احسن طریقے سے انجام دے رہی ہیں۔اس گروپ کے تحت ہونے والی تقریبات کی مقبولیت کی سب سے بڑی وجہ اسلامی اقدار کی پاسداری بھی ہے۔جن میں مذہبی رجحان کی مالک خواتین بھی بے فکری سے شرکت کرتی ہیں۔ کیونکہ اس میں پردے کا پورا اہتمام کیا جاتا ہے اور مرد حضرات کو کسی صورت تقریب میں آنے کی اجازت نہیں ہوتی۔سیدات گروپ کا آغاز ایک چھوٹے F.B(فیس بک ) سے ہوا اور آج یہ 21 ہزار مختلف قومیت سے تعلق رکھنے والی خواتین پر شامل ہے۔اور اب یہ ریاض میں خواتین کا سب سے بڑا اور مقبول liveفورم بن چکا ہے  بلکہ اسے ریاض لیڈیز کا googleکہا جائے تو بجا ہو گا۔جہاں خواتین نہ صرف اپنے مسائل کو حل کرنے کی کوشش کرتی ہیں بلکہ محنت اور ہمدردی کے جذبے سے سرشار فی سبیل اللہ ایک دوسرے کی مدد کرنےکی بھی کوشش کرتی ہیں۔گروپ ایڈمن ام ابراہیم قریشی ایک ہمہ گیر شخصیت کی مالک ہیں اور ان کے گروپ کا اہم مقصدپردیس میں پاکستان کمیونٹی کیلئے سماجی تقریبات کا انعقاد بھی ہے۔

اس کے علاوہ تمام تفریحی مواد بغیر موسیقی آلات کے ترتیب دیا جاتا ہے ۔چنانچہ آج ریاض کی خواتین اس گروپ کے ذریعے ایک خاندان بن چکی ہیں جن خوشیاں ایک دوسرے سے وابستہ ہیں۔غرض یہ گروپ گھر بیٹھی خواتین کیلئے آکسیجن کا کام دیتا ہے۔اور وہ گھر بیٹھے بھی اس گروپ کے ذریعے نہ صرف تفریح حاصل کرتی ہیں ۔اس رنگا رنگ تقریب کی مہمان خصوصی خود اس گروپ کی ایڈمن ام ابراہیم قریشی تھیں۔ جنہوں نے تقریب کو پر رونق بناتے ہوئے میزبانی کے فرائض بھی سر انجام دیئے.

مزید : عرب دنیا