ماسٹر پلان‘ تمام شہروں کیلئے بہترین منصوبے بنانے پر بحث

ماسٹر پلان‘ تمام شہروں کیلئے بہترین منصوبے بنانے پر بحث

  



ملتان (سپیشل رپورٹر)جنوبی پنجاب میں شہری علاقوں کی منصوبہ بندی اور ماسٹر پلان میں جدت اور وقت کے ساتھ ساتھ بڑھتی آبادی کو مد نظر رکھتے ہوئے ماسٹر پلان (بقیہ نمبر21صفحہ12پر)

میں مناسب تبدیلی کی ضرورت پر بحث کرنے کے لئے ملتان ترقیاتی ادارہ ملتان میں ٹاؤن پلانرز کا اجلاس منعقد ہوا جس میں ایم ڈی اے کے تمام ٹاؤن پلانرز سمیت جنوبی پنجاب کے دوسرے شہروں کے ٹاؤن پلانرزنے شرکت کی۔ ڈائریکٹر ٹاؤن پلاننگ ایم ڈی اے خالد جاوید نے تمام شرکا کو خوش آمدید کہا۔ ملتان ماسٹر پلان کے بارے میں گفتگو کرتے ہوئے انہوں نے شرکا کو بتایا کہ ملتان کا ماسٹر پلان نیس پاک سے تیار کرایا گیا ہے جو کہ 2008 سے 2028تک بیس سال کے لئے قابل عمل ہے.ڈپٹی ڈائریکٹر ٹاؤن پلاننگ خواجہ وقاص نے خوشی کا اظہار کرتے ہوئے کہا ہے کہ یہ پہلا موقع ہے کہ ملتان میں شہری منصوبہ بندی سے جوڑے لوگ میل بیٹھ کو شہری مسائل کے حل پر بات کر رہے ہیں۔ پلانر محمدقدیر الحسین نے پاکستان کے تمام شہروں کے لئے ماسٹر پلان بنانے کی اہمیت پر زور دیا اور کہا کہ آج کے ڈیجیٹل دور میں شہری منصوبہ سازی کو نئی ٹیکنالوجیز سے متعارف ہونے کی ضرورت ہے تاکہ پاکستان کے تمام شہروں کے لئے بہترین منصوبے بنائے جا سکیں۔ پاکستان کونسل آف آرکیٹیکٹ اینڈ ٹاؤن پلانر کے وائس چیئر مین خرم فرید نے نیشنل اربن پالیسی فار پاکستان کے متعلق پاکستان کے متعلق تمام شرکا کو بریف کیا اور کہاکہ پاکستان میں قومی سطح پہ اربن پالیسی آج تک نہ بن سکی اور یہ پہلا موقع ہے کہ تمام متعلقہ ادارے اس اہم پالیسی کو بنانے کے لئے فعال ہو گئے ہیں اور مستقبل قریب میں قومی سطح پر ایک جامع پالسی فراہم ہوگی۔ تقریب میں اسٹریلیا سے آئے ہوئے ٹاؤن پلانر عارف یسین چوہان نے اسٹریلیا میں موجود پلاننگ سسٹم پر شرکہ کو بریف کیا اور بتایا کہ کیسے پاکستان کچھ اچھی چیزیں باقی ممالک سے سیکھ سکتا ہے۔ ملائشیا سے ڈاکٹر عبدالرحمان نے پنجاب لوکل گوررنمنٹ ایکٹ پر بات کی اور شرکہ کو بتایا کہ کون سی ایسی متعلقہ ریگولیشن ہیں جو ٹاؤن پلانرز کو شہروں کے منصوبے بنانے کے متعلق اگاہی مہیا کرتے ہیں۔ اسلام آباد سے تیمور عباسی صاحب نے شرکت کی جنہوں نے اقبال انسٹیٹیوٹ آف پالیسی سنٹر کا تعارف کرایا اور شرکافو ری 2020 کے بارے میں بتایا جو شہروں کی بہتر ی کے لئے ڈیجیٹل انفراسٹرکچر بنانے میں کردار ادا کر رہا ہے۔

طلب

مزید : پشاورصفحہ آخر