بارش‘ژالہ باری سے گندم سمیت مختلف فصلوں کو نقصان‘ کسانوں کو سکتہ

بارش‘ژالہ باری سے گندم سمیت مختلف فصلوں کو نقصان‘ کسانوں کو سکتہ

  



وہاڑی‘ وہوا (بیورو رپورٹ‘ نمائندہ خصوصی‘ نمائندہ پاکستان) وہوا کے میدانی و مغربی کوہ سلیمان پر موسلا دھار بارشوں کے باعث چشمہ گنگ کے آبی نالہ میں شدید طغیانی آگئی اور سیلابی ریلے وہوا کی نواحی بستی مندھریں میں داخل ہوگیا جس سے پوری بستی زیر آب آگئی اور بارش (بقیہ نمبر41صفحہ12پر)

کا پانی گھروں، دکانوں میں داخل ہوگیا جس سے مکینوں کا لاکھوں روپے مالیت کا قیمتی سامان زیر آب آگیا مکینوں نے سیلابی ریلوں سے بچاؤ کے لیے اپنی مدد آپ کے تحت پانی کے راستہ میں عارضی حفاظتی بند بنانا شروع کیا جبکہ گھروں سے سامان، بچوں، عورتوں اور بوڑھوں کو محفوظ مقامات پر منتقل کیا اطلاع ملنے پر ریسکیو1122 کے اہلکار بھی موقع پر پہنچ گئے اور انہوں نے بھی امدادی کاموں میں حصہ لیا بستی مکینوں غفور احمد، رؤف عابد، صلاح الدین، جبار احمد، محمد نادر، شکور احمد، محمد یاسر، یٰسین احمد نے احتجاج کرتے ہوئے بتایا کہ بارہا بارشوں کے بعد سیلابی ریلے بستی میں داخل ہوکر تباہی مچادیتے ہیں اراکین اسمبلی اور حکام بالاء سے بستی کو سیلابی ریلوں سے محفوظ رکھنے کے لیے پختہ حفاظتی بند کی تعمیر کے لیے مطالبات کیے گئے مگر کوئی شنوائی نہیں ہوئی انہوں نے کمشنر، ڈپٹی کمشنر ڈیرہ غازی خان سے بستی کے گرد شہر پناہ کی فوری تعمیر کرکے مکینوں کو مشکلات سے نجات دلانے کا مطالبہ کیا ہے۔ شہراور گردو نواح میں حالیہ بارش اور ژالہ باری سے کسان شدید پریشان نظر آنے لگے اس موقع پر پاکستان کسان اتحاد کے ضلعی صدر چوہدری افتخار احمد اور جنرل سیکرٹری چوہدری اکرم کمبوہ نے کہا ہے کہ کسانوں کاشتکاروں نے بڑی محنت اور بہت سے پیسے لگا کر گندم کی فصل کی کاشت کی ہے مگر حالیہ بارش اور ژالہ باری نے انکی گندم کو بہت نقصان پہنچایا ہے فصلوں میں پانی جمع ہو گیا جس کے باعث گندم کی فصل خراب ہونے لگی ہے۔ ان خیالات کااظہار انہوں نے پاکستان کسان اتحاد کے عہدیداران و ممبران سے گفتگو کرتے ہوئے کیا اس موقع پر قاضی محمد نواز چوہدری اقبال یوسف رانا محمد نواز بابا نزیر احمد غلام حسین سیٹھ اسد ریاض حافظ اویس رحیم ذوالفقار علی برق سمیت دیگر بھی موجود تھے انہوں نے کہا کہ کسانوں کاشتکاروں سارا سال اپنے گھر اور خاندان کا دارومدار اس گندم کی فصل پر ہوتا ہے گندم کی فصل فروخت کرکے اس سے حاصل ہونے والی رقم سے وہ اپنے گھر کے اخراجات اور بچوں کی شادیاں اور باقی تمام زندگی کی ضروریات پوری کرتے ہے مگر اس مرتبہ بارشوں کی وجہ سے گندم کی فصل خراب ہونے سے کسانوں کاشتکاروں کا بہت نقصان ہورہا ہے حکومت کو چاہیے کہ کسانوں کے لیے کوئی احسن اقدامات کرئے تاکہ کسان گندم اور چارے کی فصل سے ہونے والے خسارے سے بچ سکیں اور ان کے گھر کا نظام زندگی بھی چلتا رہے اور آئندہ بھی خوشی خوشی گندم کی فصل کاشت کر سکے

سکتہ

مزید : پشاورصفحہ آخر