وزیراعظم عمرا ن خان ایماندار اور اچھے انسان، لیکن ٹیم اچھی نہیں  ہے: شہباز گل

وزیراعظم عمرا ن خان ایماندار اور اچھے انسان، لیکن ٹیم اچھی نہیں  ہے: شہباز گل

  

       لاہور (آئی این پی) وزیر اعظم کے معاون خصوصی شہباز گل نے کہا ہے کہ تحریک عدم اعتماد کے حوالے سے حکومت نے حکمت عملی طے کر لی، اپوزیشن کس کس سے رابطے کررہی ہے سب پتہ ہے، (ن) لیگ منافقت سے باہرآجائے، سیاسی مقابلے کی بجائے کردار کشی کررہی ہے، نواز شریف کی کابینہ میں 5 وزیرتھے، باقی سب میری طرح کے تھے، احسن اقبال نے اپنے بھائی کو ٹھیکے لے کر دیئے، خواجہ آصف نے اقامہ عمرہ کیلئے نہیں لیا تھا، وہ سیالکوٹ ہاؤسنگ سوسائٹی کیس میں نیب کومطلوب ہیں، چودھری نثارعلی خان وضع دارانسان تھے اس لئے ان کو چھوڑ گئے۔ اتوار کو لاہور میں میڈیا سے گفتگو کرتے ہوئے شہباز گل نے کہا کہ ہماری سیاسی اشرافیہ کا پرانا طریقہ واردات ہے، کیونکہ انہوں نے لوٹنا ہوتا ہے،ا گر کوئی ایمانداری ہو تو اس کے بارے میں پھیلا دیا جاتا ہے کہ وہ برا ہے لیکن اگر کوئی اچھا کام کرے توا س کے بارے میں کہا جاتا ہے کہ یہ شراب پیتا ہے اور اسے معاشرے میں مشہور کردیا جاتا ہے۔ انہوں نے کہا کہ میڈیا والوں نے تحریک انصاف کے ساتھ انصاف کیا ہے،وزیراعظم عمران خان اچھے انسان اور ایماندار ہیں لیکن ان کی ٹیم اچھی نہیں ہے،وزیراعظم کی ٹیم میں کمی ہے بھارت اور پاکستان کے لوگوں میں عادت یہ ہے کہ سنی سنائی باتون پر زیادہ یقین رکھتے ہیں اچھی بات پر کم جبکہ برائی پر یقین زیادہ یقین رکھتے ہیں،میڈیا نے بھی حسب  منشا معاونت فرمائی۔ شہباز گل نے کہا کہ نوازشریف کی وزارت میں پانچ وزراء تھے جبکہ چھٹا خرم دستگیر تھا۔احسن اقبال نے اپنے بھائی کو پنجاب میں ٹھیکے لے کردیئے، انہوں نے 3،3لاکھ کا درخت پنجاب لاہور میں بھیجا، پاکستان کا وزیر خارجہ داخلہ سعودی عرب کے اقامے پر تھا تاکہ منی لانڈرنگ کرسکے، شاہدخاقان عباسی کے ایل این جی کیس چل رہا ہے  اس کا لانگ ٹرم معاہدہ 13.780ڈالر میں کیا  جبکہ حماد اظہر کے مقابلے میں 10.28تھا وہ نکما وزیر ہے،خرم دستگیر پاکستان کا واحد سمجھدار کامرس کے وزیر جس کے ٹینور میں پاکستان کی درآمدات نیچے گئی،عبدالرزاق داؤد کے زمانے میں درآمدات 20سے 30ارب ہوگئی  اور درآمدات اوپر گئی، وزیراعظم عمران خان کی ٹیم حلقی ہے جبکہ ن لیگ کی  ٹیم بھاری ہے،اسحاق ڈار نے حدیبیہ بل میں چوری کی ایفی ڈویڈ دیا گناہوں کا اعتراف کیا، انہوں نے کان پکڑ کر بیٹھ کر ویڈیو نکالی کہ مجھے معافی دے دو آئندہ چوری نہیں کرونگا نہ مشورہ دوں گا۔شہباز گل نے کہا کہ منی لانڈرنگ کے تمام طریقے بنانے والے اور اس کے طریقے ایجاد کرنے والے اسحاق ڈار ہی ہیں،مفتیٰ اسماعیل ٹی وی پر کہہ چکے کہ اسحاق ڈار کی نکمی وزارت کی وجہ سے پاکستان کی معیشت ڈوبی، خواجہ سعید رفیق وزیرریلوے تھے پیرا گاؤن سوسائٹی میں کرپشن، فراڈ اور قبضے کی وجہ سے جیل میں رہے، غیرقانونی بنیاد پر باہر نکلے ہوئے ہیں میرٹ پر ان کا فیصلہ نہیں ہوا، خواجہ آصف بھاری کیبنٹ کے وزیر سیالکوٹ میں ہاؤسنگ سوسائٹی کے اندر فراڈ کیا جو نیب کو مطلوب تھا۔ انہوں نے کالے دھن کو سفید کرنے کیلئے چارول کی فصل کو خود ساختہ کرنے کی کوشش کی، سب سے عمدہ بات یہ کہ  جو چوکیدار کے پاس  ان اقامہ تھا،پھر کنسلٹنٹ کا اقامہ تھا، یہ یہاں وزیر جبکہ باہر ممالک میں ان کے اقامے تھے تاکہ منی لانڈرنگ کریں، میں امریکہ کی یونیورسٹی میں پڑھاتا تھا جس کی وجہ سے میرے پاس گرین کارڈ تھا، آپ کوئی وجہ بتادیں کہ آپ کس چیز میں ماہر تھے جس کی وجہ سے آپ کو اقامہ ملے،پرویز رشید پنجاب ہاؤس کے 95لاکھ کے ڈیفالٹرتھے، میں بھی پنجاب ہاؤس میں ہر ماہ  پیسے ادا کرتا ہوں کیونکہ میں وہ جوتے نہیں کھانا چاہتا جو ان کو پڑے ہیں،اگر میں ایساکروں تو مجھے بھی جوتے پڑے۔ معاون خصوصی شہباز گل  نے کہا کہ پرویزرشید کا اسلام آباد میں گھر تھاجبکہ میرا گھر بن رہا ہے، ان میں کوئی ایسا ہیرا نہیں جو کرپشن جیسے گرد کی وجہ سے آلودہ ترین نہ ہوا ہو،آپ ہمیں بار بار بتاتے ہیں کہ عمران خان کی ٹیم اچھی نہیں ہے، صرف ایک اچھا اور مخلص بندہ چوہدری نثار تھا جوانہیں چھوڑ کر چلاگیا ان کی یہاں جگہ نہیں تھی اور نہ ہی وہان کے ساتھ چل سکتے تھے،پاکستان تحریک انصاف کی پارٹی میں وزیر خارجہ شاہ محمود قریشی شروع سے ہی وزارت میں ہیں۔ مجھے ان کے بارے میں یہ بتانے کی ضرورت نہیں کہ ان کے پاس اقامہ یا پانامہ ہے، پرویز خٹک صاحب خیبرپختونخوا میں کامیاب وزیراعلیٰ تھے وہ نیب کے اندرکسی قسم کی کرپشن کا کیس نہیں بھگت رہے،وزیراعظم تعلیم شفقت محمود صاحب ایم این اے رہے ان کے بھی کوئی ہاؤسنگ سوسائٹی نہیں،وزیر منصوبہ بندی اسد عمر اپنی سیاست میں جو کام سرانجام دیئے وہ مجھے بتانے کی ضرورت نہیں۔وزیرامواصلات مراد سعید نے مہنگائی ہونے کے باوجود 17کروڑ روپے میں سڑک بنائی جبکہ اچھی ٹیم والوں نے 27کلومیٹر 20کروڑ میں بناتے  تھے، تجربہ کاروں نے پاکستان پوسٹ کو ڈوبو دیا جبکہ مراد سعید نے پاکستان پوسٹ کو خسارے سے  نکالا،ثانیہ نشتر نے 260ارب کے فنڈ پر وگرام میں مختص کئے اور ایک روپے کی کرپشن نہیں کی جبکہ آپ کے 40ارب کے پروگرام میں  گریڈ 21کے بندہ بے نظیر انکم سپورٹ پروگرام میں بیواؤں اور یتیموں  کا پیسہ لے رہے تھے۔ڈاکٹر فیصل سلطان نے کرونا جیسی وباء کو شکست دی۔انہوں بہترین مینجمنٹ کا ایوارڈ دیا گیا نارمیلسی  انڈیکس میں ایوارڈ یا گیا۔ ورلڈ بینک اور اقوام متحدہ نے بھی انہیں ایوارڈ دیا، فوادچوہدری نے پاکستان ٹیلی ویژن کمیونیکیشن خسارے سے نکالا اور سائنس وٹیکنالوجی میں اقدامات کئے، نواز شریف کے دور حکومت میں سائنس وٹیکنالوجی کے وزیر رانا تنویر نے خاص قسم کی رپورٹ بنائی ہوگئی جو وہ چوری کرسکیں، وزیراعظم عمران خان کی وزارت کے 9رتن کو گنوا دیا۔ ان کی شکلیں تو اللہ کی بنائی ہوئی ہیں لیکن برے کام کرنے کی نتیجے میں شکلوں پر پٹکار پڑ جاتی ہیں ان کا تجربہ شکلیں سوشل کنڈیکٹ وزارت میں پرفارمنس اور کسی معیار میں ن لیگ والے اے پلس گریڈر ہے جبکہ تحریک انصاف والے سی گریڈر ہیں۔ یہ منجن آپ کے ذہن میں الجھن پیدا کرنے کیلئے بھیجا گیا ہے۔ یہ ان کا طریقہ واردات ہیں اگر ن لیگ والے عمران خان کے کردار  پر حملہ کرتے تو انہیں کچھ حاصل نہیں ہوتا۔ 

شہباز گل 

مزید :

صفحہ آخر -