میو ہسپتال کے چیف آپریٹنگ آفیسر کیلئے بڑے ڈاکٹروں میں مقابلہ 

میو ہسپتال کے چیف آپریٹنگ آفیسر کیلئے بڑے ڈاکٹروں میں مقابلہ 

  

لاہور (جاوید اقبال)ملک کے سب سے بڑے سرکاری مرکز صحت میو ہسپتال لاہور کے چیف آپریٹنگ آفیسر عہدے کیلئے بڑے ڈاکٹروں میں مقابلہ شروع ہوگیا ہے اس عہدے پر تعینات ڈاکٹر افتخار علی کل اپنی مدت ملازمت پوری کرکے ریٹائر ہو جائیں گے تاہم ڈاکٹر افتخار ری امپلیمنٹ کیلئے پرامید ہیں  اور ان کی خدمات پر ان کیلئے وزیر صحت نرم گوشہ رکھتی ہیں بتایا گیا ہے کہ میو اسپتال کے میڈیکل سپرنٹنڈنٹ کے عہدے کیلئے جو آج کل چیف آپریٹنگ آفیسر کہلاتا ہے اس عہدے پر تعینات ڈاکٹرافتخار کل 14 مارچ کو اپنی مدت ملازمت پوری کرکے ریٹائر ہو رہے ہیں عہدے پر اپنی تعیناتی کے لیے پانچ طاقتور ترین سمجھی جانے والے ڈاکٹرز میں مقابلہ شروع ہوگیا ہے مقابلہ کی دوڑ میں لاہور جنرل ہسپتال اور پنیز کے میڈیکل سپرنٹنڈنٹ ڈاکٹر خالد بن اسلم سروسز ہسپتال لاہور کے میڈیکل سپرنٹنڈنٹ ڈاکٹر عامر مفتی نیشنل سیکرٹریٹ کل حافظ ڈاکٹر شاہد لطیف اصل امیدوار ہیں جبکہ لیڈی ولیڈنگ ہسپتال کی ایم ایس ڈاکٹر صباحت سروسز ہسپتال کے سابق میڈیکل سپرنٹنڈنٹ ڈاکٹر احتشام اور سید مٹھا ہسپتال کے سابق ایم ایس ڈاکٹر مسعود اختر  بھی مقابلے کی دوڑ میں شامل ہیں ذرائع کا کہنا ہے کہ اصل مقابلہ تین ڈا کٹر میں ہے ان میں سیکرٹری سپیشلائزڈ ہیلتھ ڈاکٹر احمد جاوید قاضی ہسپتال کے موجودہ ایم ایس ڈاکٹر عامر مفتی کومیو اسپتال کا چیف آپریٹنگ آفیسر لگانا چاہتے ہیں جبکہ میو ہسپتال واکنگ ایڈورڈ میڈیکل کالج کا بورڈ آف گورنرز لاہور جنرل ہسپتال کے ایم ایس ڈاکٹر خالد بن اسلم کے حق میں ہیں وزیرصحت ہسپتال کے موجودہ چیف آپریٹنگ آفیسر ڈاکٹر افتخار کو ریامپلیمنٹ کرکے دوبارہ اس عہدے پر تعینات کرنا چاہتی ہیں جس کیلئے سابق ڈائریکٹر جنرل ہیلتھ پنجاب ڈاکٹر زاہد پرویز بھی خاص متعلق ہیں ایک تیسرا گروپ ڈاکٹر شاہد لطیف کو میوہسپتال میں تعینات کروانا چاہتا ہے ایک دھڑا ان کی بجائے لیڈی ولینگڈن ہسپتال کی ایم ایس ڈاکٹر صباحت کی صحت کیلئے خدمات کو دیکھتے ہوئے انہیں میو ہسپتال میں تعینات کروانا چاہتا ہے ڈاکٹر مسعود اختر شیخ اور ڈاکٹر احتشام بھی دوڑ میں شامل ہیں۔

میو ہسپتال

مزید :

صفحہ اول -