مخالفین سے خطرہ ہے‘ تحفظ فراہم کیا جائے‘ انجینئر چیف

      مخالفین سے خطرہ ہے‘ تحفظ فراہم کیا جائے‘ انجینئر چیف

  

ٹانک(نمائندہ خصوصی)جنوبی وزیرستان: انجینیئر رفیق عالم محسود اور انعام اللہ محسود نے محسود پریس پریس کانفرنس کرتے ہوے کہا کہ آج ہم پریس کانفرنس پر اس لیے مجبور ہوگئے ہیں  کہ ہمیں اور ہمارے گھروالوں کو علی شیر محسود ایڈیشنل سیکرٹری انفارمشن ٹیکنالوجی اسلام آباد اور اس کے بھائی  آفتاب  محسود  کمانڈنٹ ایف آر پی پشاور و سابقہ سنیٹر عالم شیر اور انکے پرائیویٹ  غنڈوں سیشدید خطرہ لاحق ہے. لہذہ حکومت وقت وزیر اعظم عمران خان، آرمی چیف قمر جاوید باجوہ، وزیراعلی خیبر پختونخواہ کور کمانڈر پشاور ائی جی پولیس کے پی کے سے تحفظ اور انصاف دلانے کا مطالبہ کرتے ہیں.تفصیلات کے مطابق علی شیر محسود  ایڈشنل سیکرٹری انفارمیشن ٹیکنالوجی اسلام آباد اور اس کا آفتاب  محسود کمانڈنٹ ایف آر پی  پشاور اور انکے والد سابقہ سنیٹر عالم شیر سمیت پرائیویٹ غنڈہ گرد گروپ سے رفیق عالم، انعام اللہ خان کو شدید خطرہ ہے. انہوں نے کہا کہ علی شیر افتاب عالم اور عالم شیر جوکہ ہمارے رشتہ دار ہیں انکے ساتھ پچھلے کئی سالوں سے ہمارا جائیداد کا تنازعہ چل رہاہے ان لوگوں نے اپنی سرکاری حیثیت کا ناجائز استعمال کرکے غیرقانونی طریقہ سیہماری جائیدادوں  پر قبضہ جمایا ہواہے. ہم جب انصاف مانگنے کی کوشش  کرتے ہیں تویہ لوگ اپنی سرکاری پوزیشن کا فائدہ اٹھاتے ہوے غیر قانونی اور ناجائز طاقت کا استعمال کرکے ہمیں جیلوں میں ڈال دیتے ہیں. ان کا کہنا تھا ہمیں مختلف اشتہاریی غنڈوں کے زرایعے ہراساں کیا جا رہا ہے اور ان اشتہاریوں کو ان لوگوں نے اسلحہ فراہم کرکے ہمارے جائیددوں اور گھروں کے سامنے بٹھایا ہوا ہے جس سے ہمارے بچے  خوف کی وجہ سے سکول جانے  سے انکاری ہیں انہوں نے کہا کہ ہم نے ہر قانون، آئینی اور روایتی راستہ اپنانے کی بھر پور کوشش کی ہے لیکن ان کے بیس گریڈ اور اکیس گریڈ اور سابقہ سینیٹری  کے سامنے بے بس ہو جاتے ہیں.  اس سے پہلے سابقہ آر پی او ڈیرہ اسماعیل خان سے لیکر ایس ایچ او تک اور کمشنر سے لیکر ڈپٹی کمشنر، تحصیلدار اور پٹواری تک ہمارے خلاف استعمال کیئے جا چکے ہیں اور  آج بھی یہ لوگ ریجنل اور ضلعی افسران پر دباؤ ڈالنے کی کوشش کررہے ہیں. انہوں نے کہا کہ علی شیر اور آفتاب نے جعلی و بوگس رجسٹریاں کر کے جائدادوں کو ہتھیانے کی کوشش بھی کی ہے جن کے  ثبوت بھی موجود ہیں لیکن تاحال ان کے خلاف کوئی کاروائی عمل میں نہیں لائی گئی. ان کا کہنا تھا کہ علی شیر، افتاب اور ان کے والد عالم شیر کے  پالے ہوے غنڈے اج بھی ہماری جائیدادوں میں دندناتے پھر رہے ہیں جن سے ہمیں اور ہمارے گھر والوں کو شدید خطرہ ہے کہ وہ کسی بھی وقت ہمیں نقصان پہنچا سکتے ہیں. ان کا کہنا تھا کہ پاکستان ایک خود مختیار ملک ہے اور اس کے ادارے اپنے فرائض کو سر انجام دینے میں آزاد ہیں. انہوں نے وزیراعظم پاکستان، چیف اف ارمی سٹاف، وزیراعلی خیبر پختونخواہ، کور کمانڈر پشاور اور آئی جی پولیس کے پی کے سیمطالبہ کیا کہ ہمیں تحفظ فراہم کیا جائے اور انصاف دلایا جائے اور مذکورہ اشخاص علی شیر، افتاب اور عالم شیر کے خلاف قانونی کاروائی کی جائے

مزید :

پشاورصفحہ آخر -