کراچی، اسٹیٹ بینک میوزیم میں منفرد نمائش کا افتتاح 

کراچی، اسٹیٹ بینک میوزیم میں منفرد نمائش کا افتتاح 

  

کراچی (اسٹاف رپورٹر)بینک دولت پاکستان کے گورنر ڈاکٹر رضا باقر نے آج اسٹیٹ بینک میوزیم کراچی میں ایک نمائش کا افتتاح کیا۔ اس نمائش میں ’ہمارا مشترکہ ثقافتی ورثہ‘ کے موضوع پر اختراعی منصوبے شامل ہیں  جنہیں  بین الاقوامی عجائب گھروں  اور کراچی یونیورسٹی کے اشتراک اور برٹش کونسل کے تعاون سے مکمل کیا گیا۔ ہیریٹیج اسپیشلسٹ محترمہ جولیٹ ڈین سمیت مانچسٹر میوزیم برطانیہ کی ایک ٹیم اس نمائش میں موجود ہوگی۔ حاضرین سے خطاب کرتے ہوئے گورنر اسٹیٹ بینک ڈاکٹر رضا باقر نے کہا کہ اب یہ بات ٹھوس انداز میں کہی جا سکتی ہے کہ میوزیم  کی ضرورت آج پہلے کے مقابلے میں کہیں زیادہ  ہے۔ اہم سماجی مسائل پیش کرنے سے لے کرہمارے مستقبل کو دیکھنے  کے انداز کو بدلنے تک یہ بظاہر معمولی عجائب گھر ہمارے معاشرے کی عکاسی کرنے اور اسے بدلنے  کی صلاحیت رکھتے ہیں۔ انہوں نے مزید کہا کہ ٹیکنالوجی میں انقلاب کی وجہ سے عجائب گھروں کے مقصد اور وجود پر سوالات اٹھائے جار ہے ہیں اور اسے چیلنج کیا گیا ہے، تاہم حقیقت یہ ہے کہ  جدید ٹیکنالوجی میوزیم کو بدلنے میں اہم کردار ادا کر رہی ہے۔ یہ محض دیکھنے اور سیکھنے کے مقامات نہیں بلکہ یہ تبادلے، شرکت اور مشغولیت کی جگہیں ہیں۔یہ نمائش 2021 میں آغاز کردہ کوششوں کا نتیجہ ہے جب کراچی یونیورسٹی کے شعبہ بصری مطالعہ نے برٹش کونشل کی شراکت سے اسٹیٹ بینک میوزیم سے مل کر نوجوان افراد کو ’ہمارا مشترکہ ثقافتی ورثہ‘ پروگرام میں شامل کرنے کے اختراعی طریقے وضع کیے۔ اس پروگرام کے تحت کراچی یونیورسٹی کے فائن آرٹس، گرافک ڈیزائن، فلم اور اینی میشن کے شعبوں کے 75 طلبہ و طالبات نے اسٹیٹ بینک میوزیم کی ڈسپلیز، کلکشنز، تشریحات اور وزٹر کی پیشکش کے جواب میں کئی پراجیکٹس پر کام کیا۔

مزید :

صفحہ آخر -