دوسال میں مصر کے حالات بہتر ہو جائیں گے،السیسی

دوسال میں مصر کے حالات بہتر ہو جائیں گے،السیسی

قاہرہ(ثناءنیوز)مصر میں اہم ترین صدارتی امیدوار اور سابق فوجی سربراہ فیلڈ مارشل عبدالفتاح السیسی نے کہا ہے کہ اگر معاملات ان کے منصوبے کے مطابق آگے بڑھتے رہے تو انہیں توقع ہے مصر کی صورت حال دو سال میں بہتر ہو جائے گی۔ انہوں نے یہ بات ایک انٹرویو کے دوران کہی ہے۔عبدالفتاح السیسی جنہوں نے جولائی 2013 کے دوران مصر کے پہلے منتخب صدر کو برطرف کر دیا تھا، یہ بھی پیش کش کی ہے کہ اگر ان کے خلاف عوام نے وسیع پیمانے پر احتجاج کیا تو وہ مستعفی ہو جائیں گے۔واضح رہے فیلڈ مارشل السیسی کی حمایت سے قائم عبوری حکومت نے مصر میں احتجاج کو روکنے کیلیے نئے قوانین بنا کر عملا یہ راستہ پہلے بند کر دیا ہے۔ جبکہ السیسی کی سب سے اہم مخالف جماعت اخوان المسلمون کے تقریبا پندرہ ہزار کارکن اپنی قیادت سمیت

 جیلوں میں بند ہیں اور اخوان المسلمون پر پابندی عاید کر دی گئی ہے۔السیسی نے کہا '' مسائل پر دو برسوں میں قابو پا لیا جائے گا۔'' انہوں نے یہ بھی کہا '' اگر عوام ان کے خلاف سڑکوں پر آگئے تو میں ان سے پوچھوں گا کہ تم مجھے چاہتے ہو یا نہیں، میں صرف تمہارے حکم کی تعمیل کروں گا۔''مرسی کی برطرفی کے بعد ان کے حامیوں کا احتجاج ختم کرانے کیلیے صرف ایک کریک ڈاون کے دوران اگست 2013 میں 1400 مظاہرین ہلاک ہو گئے تھے۔ اس کے بعد بھی سکیورٹی فورسز کا حکومت مخالف سیاسی کارکنوں کے خلاف کریک ڈاون مسلسل جاری ہے۔صدارتی امیدوار عبدالفتاح السیسی پہلے ہی یہ کہہ چکے ہیں کے ان کے صدر بننے کے بعد اخوان المسلمون مصر میں نظر نہیں آئے گی، جبکہ انہوں نے اپنے اوپر قاتلانہ حملوں کا خود ہی انکشاف کرتے ہوئے کہا '' میں خوف زدہ نہیں ، میں تقدیر کو مانتا ہوں۔''اہم ترین مصری صدارتی امیدوار کو یقین ہے کہ وہ 26 اور 27 مئی کو ہونے والے صدارتی انتخاب میں واضح برتری حاصل کریں گے۔

مزید : عالمی منظر


loading...