ڈومور کا مطالبہ پرانی بات ،حکومت دہشت گردی کے خلاف ٹھوس اقدامات اٹھا رہی ہے ،سرتاج عزیز

ڈومور کا مطالبہ پرانی بات ،حکومت دہشت گردی کے خلاف ٹھوس اقدامات اٹھا رہی ہے ...

                                                              اسلام آباد ( اے این این ) وزیراعظم کے مشیربرائے امور خارجہ سرتاج عزیز نے کہا ہے کہ امریکہ کی جانب سے ”ڈومور“ کا مطالبہ قصہ پارینہ بن چکا ہے، ہماری حکومت دہشت گردی کے خلاف موثر اقدامات اٹھا رہی ہے، ہم پڑوسی ممالک کے ساتھ بہتر تعلقات اور عدم مداخلت کی پالیسی پر عمل پیرا ہیں، ملک کی جغرافیائی حیثیت کا مثبت فائدہ اٹھانا چاہتے ہیں، پاکستان کی خارجہ پالیسی معاشی سفارتکاری پر مبنی اور مضبوط ہے۔ ان خیالات کا اظہار انہوں نے سینٹ کے اجلاس میں اظہار خیال اور بعد میں صحافیوں سے گفتگو کرتے ہوئے کیا۔ انہوں نے کہا کہ پاکستان کی خارجہ پالیسی مضبوط ہے اس حوالے سے اپوزیشن کی تنقید بلا جواز ہے، حکومت معاشی سفارتکاری پر بھرپور توجہ دے رہی ہے، ہم دوست ممالک سے امداد کی بجائے تجارت کو ترجیح دے رہے ہیں۔ چین، ترکی اور کوریا کے ساتھ تجارت پر بات ہوئی ہے۔ انہوں نے کہا کہ موجودہ حکومت کے اقتدار میں آنے کے بعد افغانستان اور بھارت سمیت تمام پڑوسی ممالک کے ساتھ تعلقات میں بہتری آئی ہے۔ امریکہ کے ساتھ تعلقات بھی بہتر ہوئے ہیں، ہم دوسرے ملکوں کے معاملات میں عدم مداخلت کی پالیسی پر گامزن ہیں کسی ملک کے معاملات میں مداخلت نہیں کرینگے، ہم ملک کی جغرافیائی حیثیت کا مثبت فائدہ اٹھانا چاہتے ہیں۔ ایک سوال کے جواب میں انہوں نے کہا کہ امریکہ ماضی میں افغانستان کے حوالے سے ڈومور کی بات کیا کرتا تھا مگر ہماری حکومت نے دہشت گردی کے خاتمے کیلئے جامہ پالیسی بنائی ہے جس میں نیکٹا کا قیام، سریع الحرکت فورس کی تشکیل اور اداروں کے درمیان انٹیلی جنس معلومات کا تبادلہ بھی شامل ہے۔ داخلی پالیسی میں مزید بہتری لائی جارہی ہے۔ امریکہ شمالی وزیرستان میں شدت پسندوں کے ڈھانچے کو افغانستان کیلئے خطرہ سمجھتا تھا اور ڈومور کی باتیں کیا کرتا تھا ہم نے اس معاملے پر امریکہ کے ساتھ مذاکرات کرینگے۔ ایک سوال کے جواب میں انہوں نے کہا کہ وزیراعظم کا دورہ ایران کامیاب رہا ہے ہم اگلے دو سال میں ایران کے ساتھ باہمی تجارتی حجم 5ارب ڈالر تک لے جانا چاہتے ہیں ۔ امریکہ اور ایران کے ساتھ گیس پائپ لائن منصوبے کے بارے میں بھی بات ہورہی ہے امید ہے اس میں بہتری آئے گی۔ ایران کے ساتھ زرعی اجناس کی تجارت پر پابندی نہیں ہے۔ انہوں نے کہا کہ پاکستان دہشت گردی کے خاتمے کیلئے کوشاں ہے، ہم قانون کی عملداری، انسانی حقوق کے تحفظ اور جمہوریت کے استحکام کیلئے پرعزم ہیں۔

سرتاج عزیز

مزید : صفحہ آخر


loading...