کرپشن کیس: سابق اسرائیلی وزیراعظم ایہود المرٹ کو چھ سال قید کی سزا

کرپشن کیس: سابق اسرائیلی وزیراعظم ایہود المرٹ کو چھ سال قید کی سزا
کرپشن کیس: سابق اسرائیلی وزیراعظم ایہود المرٹ کو چھ سال قید کی سزا

  


تل ابیب (مانیٹرنگ ڈیسک) اسرائیل کی ایک عدالت نے ملک کے سابق وزیراعظم ایہود اولمرٹ کو رشوت لینے کے جرم میں 6 سال قید اور ایک لاکھ اکہتر ہزار سٹرلنگ پاﺅنڈ جرمانے کی سزا سنائی ہے۔ جج نے سابق وزیراعظم کو حکم دیا وہ یکم ستمبر کو جیل میں حاضر ہوں تاہم سابق وزیراعظم کے وکیل کو سپریم کورٹ میں اپیل دائر کرنے کی مہلت بھی دی ہے، وہ کسی بھی اسرائیلی حکومت کے پہلے سربراہ ہیں جنہیں قید کی سزا سنائی گئی ہے۔ 68سالہ اولمرٹ کو رواں برس مارچ میں ایک تعمیراتی منصوبے میں رشوت لینے کا مجرم قرار دیا گیا تھا۔ یہ منصوبہ یروشلم کے تل ابیب ڈسٹرکٹ میں ’ہولی لینڈ‘ کے نام سے اپارٹمنٹ بنانے کا تھا اور ایہود اولمرٹ پر جو اس وقت یروشلم کے میئر تھے، الزام تھا کہ انہوں نے پانچ لاکھ شیکل یا 86 ہزار پاﺅنڈ لے کر مقدس قرار دیئے گئے زون میں قانون تبدیل کر کے متنازع اپارٹمنٹ تعمیر کرنے کی راہ ہموار کی۔ اسی منصوبے کی مد میں انہوں نے 60 ہزار شیکل مزید لئے تھے۔ اسی مقدمے میں دیگر 10 افراد کو بھی سزائیں دی گئیں۔ ان لوگوں میں سرکاری اہلکار اور کچھ کاروباری شخصیات شامل ہیں ان میں سے چھ کو تین سے سات سال قید کی سزائیں دی گئی ہیں۔ جج ڈیوڈ روزن نے فیصلے میں کہا ہے کہ رشوت ایک ایسا جرم ہے جو ’سارے پبلک شعبے کو آلودہ کرتا اور حکومتی ڈھانچے کے انہدام کا سبب بنتا ہے۔

مزید : بین الاقوامی


loading...