بارہویں جماعت کی طالبہ سے چلتی گاڑی میں زیادتی

بارہویں جماعت کی طالبہ سے چلتی گاڑی میں زیادتی
 بارہویں جماعت کی طالبہ سے چلتی گاڑی میں زیادتی

  


ایبٹ آباد(مانیٹرنگ ڈیسک) مانسہرہ میں بارہویں جماعت کی طالبہ کو ساتھی طالبہ نے جھانسہ دے کر چلتی کار میں اپنے 3 اوباش دوستوں سے زیادتی کا نشانہ بنوادیا،پولیس نے ملزموں کی گرفتار کرکے اُن کی نشاندہی پر اندوہناک فعل میں ملوث ملزمہ کو بھی حراست میں لے کر مقدمہ درج کرلیا، گرفتار ملزموں کو مقامی عدالت میں پیش کیاگیاجہاں شہریوں نے سزائے موت کامطالبہ کرتے ہوئے ملزموں کوانڈے مارے جبکہ عدالت نے  ملزمان کو چارروزہ جسمانی ریمانڈ پر پولیس کے حوالے کردیا۔ پولیس کے مطابق متاثرہ لڑکی بارہویں جماعت کی طالبہ ہے جو کالج سے اپنی ساتھی طالبہ کے ساتھ گھر لوٹ رہی تھی۔ متاثرہ لڑکی کی ساتھی طالبہ اوباش نوجوانوں سے ملی ہوئی تھی جس نے لڑکی کو گھر چھوڑنے کا جھانسہ دے کر ملزمان کے ساتھ گاڑی میں بیٹھنے پر مجبور کیااور ملزمان نے بالاروڈ پر چلتی گاڑی میں ہی طالبہ کو درندگی کا نشانہ بنایا۔ ملزمان کا تعلق مانسہرہ کے بااثر خاندان سے ہے۔ ڈی پی او خرم رشید کے مطابق تینوں ملزمان اور ان کی ساتھی ملزمہ کو گرفتار کرکے واردات میں استعمال ہونے والی گاڑی برآمد کرلی۔ واقعے کا مقدمہ درج کرکے قانونی کارروائی بھی شروع کردی گئی ۔ بدھ کو پولیس نے تمام ملزموں کو جوڈیشل مجسٹریٹ کی عدالت میں پیش کیا، پیشی کے بعد احاطہ عدالت میں کثیر تعداد میں لو گ پہنچ گئے اور شدید نعرہ بازی کی۔ مظاہرین نے مطالبہ کیا کہ ملزموں کو پھانسی دی جائے ، ملزموں پر انڈے پھینکے ۔ مظاہرین کودیکھتے ہوئے پولیس نے عدالت سے واپسی کیلئے بکتر بند گاڑی منگوالی جس کے ذریعے ملزموں کو واپس لے جایاگیا۔

مزید : جرم و انصاف /Headlines


loading...