ننکانہ کشیدگی کاذمہ دار ذوالقرنین ڈوگر :چیئرمین وقف املاک بورڈ ،صدیق الفاروق کی ہٹ دھرمی سے واقعہ پیش آیا،ڈوگر کا جواب

ننکانہ کشیدگی کاذمہ دار ذوالقرنین ڈوگر :چیئرمین وقف املاک بورڈ ،صدیق ...
ننکانہ کشیدگی کاذمہ دار ذوالقرنین ڈوگر :چیئرمین وقف املاک بورڈ ،صدیق الفاروق کی ہٹ دھرمی سے واقعہ پیش آیا،ڈوگر کا جواب

روزنامہ پاکستان کی اینڈرائیڈ موبائل ایپ ڈاؤن لوڈ کرنے کے لیے یہاں کلک کریں۔

ننکانہ صاحب(مانیٹرنگ ڈیسک )چیئرمین متروکہ وقف املاک بورڈ صدیق الفاروق نے کہا ہے کہ انیس ہزار ایکڑ زمین قبضہ مافیا کے حوالے نہیں کی جا سکتی ۔انہوںنے کہا کہ ننکانہ صاحب میں جو کچھ ہوا اس کی سربراہی رکن پنجاب اسمبلی ذوالقرنین ڈوگر نے کی۔

ننکانہ میں ہونے والے احتجاج اور کشیدگی کے حوالے پریس کانفرنس کرتے ہوئے ان کا کہنا تھا کہ آپریشن پہلے سے طے تھا کرنے گئے تو ساتھ والے گاﺅں کے لوگوں نے منصوبہ بندی کے ساتھ مجھ پر حملہ کردیا۔انہوں نے کہا کہ ننکانہ میں چار سو کنال زمین واگزار کرالی،بورڈ کا امین ہوں ہزاروں ایکڑ زمین قبضہ مافیا کے حوالے نہیں کی جاسکتی۔انہوں نے کہا سرکاری کام کے دوران مشتعل افراد نے لاٹھیوں او ر ڈنڈوں سے حملہ کیا.

محکمہ اوقاف کے دفاتر میں آتشگیر مادہ پھینک کر آگ لگائی گئی۔ان کا کہنا تھا کہ اس آپریشن کا ایم پی اے ذوالقرنین ڈوگر کو بھی علم تھا لیکن ا نہی کی سربراہی میں یہ سب کچھ ہوا۔صدیق الفاروق کا کہنا تھا کہ مسلح افراد نے مجھ پر اور عملہ پر حملہ کیا ،گاڑیوں کی توڑ پھوڑ اور منصوبہ بندی کے ساتھ میرے قتل کی سازش کی گئی۔انہوں نے کہا اس حوالے سے ڈی پی او،ہوم سیکرٹر اور آئی جی پنجاب پولیس کو اطلاع کردی گئی ہے۔ڈی سی او انتہائی کمزور ہے۔

دوسری جانب حکومتی رکن پنجاب اسمبلی ذوالقرنین ڈوگرکا کہنا ہے کہ معاملہ بات چیت سے حل ہو سکتا تھا لیکن صدیق الفاروق کی ہٹ دھرمی کی وجہ سے صورتحال نے یہ رخ اختیار کیا۔ان کا کہنا تھا کہ صدیق الفاروق سے کوئی ذاتی دشمنی نہیں ہے۔ننکانہ صاحب میں جو کچھ ہوا س کی مذمت کرتا ہوں۔ذوالقرنین نے کہا کہ مجھے اس آپریشن کا کوئی علم نہیں تھا،پتہ چلنے پر کہا تھا کہ جو لوگ پہلے سے بیٹھے ہیں ان سے مناسب کرایہ وغیرہ طے کرلیںاور آئندہ جو پالیسی بنائیں اس پر عمل کرلیا جائے گا۔

مزید : ننکانہ صاحب