زیادہ فحش فلمیں دیکھنے والے لوگ بالآخر کس کام پر مجبور ہوجاتے ہیں؟ سائنسدانوں نے ایسی بات کہہ دی کہ آج تک کی تمام تحقیق غلط قرار دے دیں، نیا تنازعہ کھڑا ہوگیا

زیادہ فحش فلمیں دیکھنے والے لوگ بالآخر کس کام پر مجبور ہوجاتے ہیں؟ ...
زیادہ فحش فلمیں دیکھنے والے لوگ بالآخر کس کام پر مجبور ہوجاتے ہیں؟ سائنسدانوں نے ایسی بات کہہ دی کہ آج تک کی تمام تحقیق غلط قرار دے دیں، نیا تنازعہ کھڑا ہوگیا

  

نیویارک (مانیٹرنگ ڈیسک) جدید سائنس نے انسان کی ترقی و کامیابی میں اہم کردار اداکیا ہے لیکن سائنسدانوں کا لبادہ اوڑھے کچھ مشکوک تحقیق کاروں نے انسان کو گمراہ کرنے میں بھی کوئی کسر نہیں چھوڑی۔ یونیورسٹی آف اوکلاہوما کے ایک ایسے ہی سائنسدان نے اپنی تحقیق کے بعد دعویٰ کردیا ہے کہ فحش فلمیں بالآخرا نسان کو مذہب کی طرف مائل کر دیتی ہیں۔

ریپ کی کوشش میں نوجوان اپنی زبان کٹوا بیٹھا

اخبار دی میٹرو کے مطابق نام نہاد سائنسدان سیموئل پیری کی تحقیق سائنسی جریدے جنرل آف سیکس ریسرچ میں شائع ہوئی ہے۔ سیموئل پیری کا کہنا ہے کہ اس تحقیق کے لئے 1314 نوجوان طالب علموں کی فحش بینی کی عادات اور مذہبی رویے کا چھ سال تک مطالعہ کیا گیا۔ اس مطالعے کے بعد انہوں نے معلوم کیا کہ جو نوجوان ہفتے میں ایک سے زائد مرتبہ فحش فلم دیکھتے رہے وہ مذہب کی طرف نسبتاً زیادہ مائل ہوئے تھے۔

راتوں رات جلد میں نکھار لانے والی کریمیں کتنی خطرناک ہیں، جانئے

سیموئل پیری کے مطابق اس رجحان کی وجہ وہ پچھتاوا ہے کہ جو فحش مواد دیکھنے کے بعد ہوتا ہے۔ وہ کہتے ہیں کہ نوجوان فحش فلمیں دیکھنے کے بعد خود کو گناہگار محسوس کرتے ہیں اور اس گناہ کو دھونے کے لئے مذہب کی طرف اور زیادہ مائل ہوتے ہیں۔ان کے نظریے کے مطابق فحش مواد دیکھنے کی شرح میں جتنا اضافہ ہوتاجاتا ہے مذہب کی طرف رجحان بھی اتنا ہی بڑھتا جاتا ہے۔

مزید : ڈیلی بائیٹس