امام مہدی کے ظہور سے عالم اسلام کے مسائل حل، خدا کی حاکمیت قائم ہو گی

امام مہدی کے ظہور سے عالم اسلام کے مسائل حل، خدا کی حاکمیت قائم ہو گی

  

لاہور(پ ر)خانہ فرہنگ ایران لاہور میں حضرت امام مہدی علیہ السلام کے جشن ولادت کی تقریب منعقد ہوئی ، جس میں مختلف مسالک کے علمائے کرام،مشائخ،شعراء اور ایران و پاکستان کے خواتین و حضرات نے شرکت کی۔مقررین کے اظہار خیال کے علاوہ مداح اہل بیت اور شعرائے کرام نے بھی امام عالی مقام کی شان میں عقیدت کے پھول نچھاور کئے۔ مقررین نے تقریب سے خطاب کرتے ہوئے کہا کہ احادیث رسول اکرمؐ کے مطابق اور اہل سنت کے علماء اور اہل تشیع کے نزدیک قیامت سے قبل امام مہدی کی آمد یقینی سمجھی جاتی ہے۔

، اور جو اس سے انکار کرتا ہے وہ احادیث اور اسلام کا انکار کرتا ہے ۔

امام مہدی علیہ السلام کا تصور صرف مسلمانوں کا نہیں بلکہ اسلام سے پہلے بھی قدیم کتب میں ملتا ہے ۔ زرتشتی، ہندو، عیسائی، یہودی وغیرہ سب یہ عقیدہ رکھتے ہیں کہ دنیا کے ختم ہونے کے قریب ایک نجات دہندہ کا ظہور ہوگا جو دنیا میں ایک انصاف پر مبنی حکومت قائم کرے گا۔ یہ تصور مسلمانوں میں اس لیے نہیں آیا کہ اس سے پہلے یہ موجود تھا بلکہ یہ عقیدہ احادیث سے ثابت ہے ۔ امام مہدی کے وجود کے بارے میں اسلامی کتب میں صراحت سے احادیث ملتی ہیں جو حد تواتر تک پہونچتی ہیں۔امام مہدی علیہ السلام روئے زمین کو عدل و انصاف سے اس طرح بھر دینگے جس طرح وہ ظلم و ستم سے بھری ہوئی تھی،یعنی امت کو ان کے دور میں جن امور کی ضرورت ہوگی اور جو چیزیں اس کی کامیابی اور برتری کے لیے ضروری ہوں گی اور پوری روئے زمین کے مسلمان بے تحاشا قربانیاں دینے کے باوجود محض ان چند چیزوں کے نہ ہونے کی وجہ سے کامیاب نہ ہو رہے ہوں گے ۔مقررین نے کہا کہ احادیث اور پیشگوئیوں کے تناظر میں یہ ظاہر ہوتا ہے کہ امام مہدی کی آمد اب قریب ہے ۔ور ہمیں بھی اس کے لئے دعا کرنی چاہئے تاکہ عالم اسلام کے سارے مسائل حل ہوسکیں اور دنیا میں پوری طرح دین خداکی حاکمیت ہو۔

مزید :

میٹروپولیٹن 4 -