پی کے 55میں گیس کی ترسیل کا منصوبہ خوش آئند ہے‘ رحیم داد

پی کے 55میں گیس کی ترسیل کا منصوبہ خوش آئند ہے‘ رحیم داد

  

شیرگڑھ (نامہ نگار ) پاکستان پیپلزپارٹی کے مرکزی رہنماء اور سابق سینئر صوبائی وزیر رحیم داد خان نے کہاہے کہ پی کے 55میں گیس کی ترسیل کا منصوبہ خوش آئند قدم ہے مگر اس کا کریڈٹ کسی ایک پارٹی اور فرد کو لینا نہیں چاہئے یہ اس حلقہ کی عوام جملہ سیاسی قوتوں اور پیپلزپارٹی کے کاوشوں کا نتیجہ ہے گیس پائپ لائن بچھانے کے لئے محکمہ سوئی نادرن گیس سڑکوں کو کھنڈر بنانے سے گریز کریں میرے دور حکومت میں کئے گئے سروے کے مطابق بلاتفریق پورے علاقے کو سوئی گیس فراہم کئے جائیں اگر ہمارے مطالبے کے مطابق سوئی گیس کی فراہمی کے کام پر عمل نہیں کیاگیا تو ہم راست اقدام اٹھانے پر مجبور ہوجائیں گے پیپلزپارٹی رواداری اور برداشت کی سیاست پر یقین رکھتی ہے آنے والے انتخابات کے انتخابی مہم میں تمام سیاسی جماعتیں اور انتخابی امیدوار رواداری اور برداشت کو اپنا شعار بنائیں انتظامی اور الیکشن کمیشن پرامن اور خوشگوار ماحول میں انتخابات کا انعقاد یقینی بنائیں میاں نواز شریف ملک کی بدنامی کے باعث بننے والے بیانات اور اظہار رائے سے اختراز کریں اگر پاکستان رہے گا تو پیپلزپارٹی اور مسلم لیگ سمیت تمام سیاسی جماعتیں یہاں پر سیاست کرسکے گی بصورت دیگر کچھ نہیں رہے گا وہ اپنی رہائش گاہ پر میڈیا کے نمائندوں کے ساتھ گفتگو کررہے تھے انہوں نے کہاکہ حلقہ کے عوام کی ترقی اور خوشحالی جو بھی فرد اور پارٹی کام کرے گی خوش آئندبات ہے مگر پی کے 55کو سوئی گیس کی ترسیل کے منصوبے کا کریڈٹ کسی ایک پارٹی اور فرد کو نہیں لیناچاہئے کیونکہ سوئی گیس کی اس علاقے کو فراہم کرنے کی کاوشوں میں پیپلزپارٹی اور مجھ سمیت اس حلقہ کے تمام سیاسی قائدین اور جماعتوں اور عوام کا اپنا ایک حصہ ہے انہوں نے کہاکہ یہ معلوم نہیں کہ حلقہ میں صرف گیس پائپ کو بچھایاجاتاہے یا اس میں سوئی گیس بھی آئے گا مگر ہم پھر بھی اس کام کو قدر کی نگاہ سے دیکھتے ہیں گیس پائپ لائن بچھانے کی صورت میں ہم حلقہ کی سڑکوں کو کھنڈر بنانے نہیں دیں گے اگر گیس کی فراہمی میں پسند اور ناپسند ،سیاسی وابستگی اور تفریق سے کام لیاگیا تو ہم سب سے پہلے پائپ لائن بچھانے کے راستے میں رکاؤٹ بنیں گے انہوں نے کہاکہ آنے والے انتخابات میں عوام اپنے نئی قیادت کا انتخابا کرے گی انتخابات کو صاف وشفاف بنانے کے لئے امن وامان برقرار رکھنا جہاں اہم ضرورت ہے وہاں سیاسی جماعتوں اور امیدواروں کی طرف سے شائستگی ،رواداری،برداشت اور ایک دوسرے کے احترام کی روش کو اپنانا چاہئے انہوں نے الیکشن کمیشن اور انتظامیہ سے پرزور مطالبہ کیا کہ وہ انتخابی مہم اور پولنگ کے وقت امن وامان کو یقینی بنانے کے لئے ضروری اقدامات اٹھائیں تاکہ انتخابا ت کا عمل شفافیت کے ساتھ مکمل ہوسکے انہوں نے خبردار کیا کہ اگر کہیں بھی طرفداری اور انتظامیہ یا الیکشن کمیشن کی طرف سے پارٹی بننے کا اشارہ ملا تو پیپلزپارٹی پوری قوم کو ساتھ لے کر اس عمل کا روک تھام کرے گی

مزید :

پشاورصفحہ آخر -