بغیر امتحان اگلی جماعتوں میں ترقی

بغیر امتحان اگلی جماعتوں میں ترقی

  

کورونا وائرس کی وبا کے باعث تعلیمی ادارے بند کئے گئے اور اب بھی فیصلہ یہی کیا گیا کہ یہ سب جون اور جولائی میں بھی بند ہی رہیں گے، اس عرصہ میں ہونے والے تمام امتحانات بھی ملتوی چلے آ رہے ہیں، جو محکمہ تعلیم کے مطابق سالانہ امتحان ہیں۔ اِن ملتوی شدہ امتحانات میں اے اور او لیول کے امتحان بھی شامل ہیں، جو برٹش کونسل کے ذریعے ہوتے ہیں۔ تعلیمی ادارے مارچ میں بند کئے گئے۔وفاقی وزیر تعلیم شفقت محمود نے کہا ہے کہ طلباء و طالبات کی صحت کا مسئلہ ہے،اِس سے نہیں کھیلا جا سکتا۔ اِس لئے غور کیا جا رہا ہے کہ اگر امتحان نہیں ہو پا رہے تو طلباء کو ان کی پچھلے جماعتوں کے ریکارڈ اور نمبروں کے مطابق اگلی جماعت میں ترقی دے دی جائے۔ اس سلسلے میں سب تعلیمی بورڈوں سے تجاویز طلب کی ہیں۔ ادھر نجی تعلیمی اداروں کے مالکان نے یکم جون سے تعلیمی سرگرمیاں جاری رکھنے کا اعلان کر دیا اور تعلیمی ادارے کھول دیئے جائیں گے، اُن کا موقف ہے کہ اکثر و بیشتر تعلیمی ادارے کرایہ کی عمارتوں میں ہیں، اگر تعلیمی سرگرمیاں شروع نہ کی گئیں تو طلباء کا حرج اپنی جگہ بہت سے ادارے بند ہو جائیں گے اور کئی لاکھ افراد بے روزگاری کا شکار ہوں گے۔یہ سب اپنی جگہ اور ظاہر ہے، لیکن جو کچھ کہا جا رہا ہے وہ محل ِ نظر ہے۔ سابقہ ریکارڈ کے باعث اگلی جماعت میں ترقی بھی عجیب فیصلہ ہو گا کہ اکثر طلباء محنت کرکے اپنی پوزیشن بہتر اور کئی طالب علم سست روی کا شکار ہو کر فیل بھی ہو جاتے ہیں۔معیار تو صرف امتحان ہوتے ہیں، اِس لئے یوں محسوس ہوتا ہے کہ سرکار اس مسئلہ پر بھی کنفیوژن کا شکار ہے۔بچوں کی حفاظت کے پیش ِ نظر تعلیمی ادارے مزید بند رکھنا بجا، لیکن امتحانات کے بغیر ترقی درست فیصلہ نہیں۔ اگر کورونا کے باعث سارا نظام تلپٹ ہوا ہے، تو اِسے پھر سے ترتیب دیا جائے اور تعلیمی کیلنڈر کو نہ چھیڑا جائے اور جو نظام وضع ہے اس میں بہتری لائی جائے۔ اسی طرح نجی مالکان کا مطالبہ بھی معقول اور درست نہیں۔ فی الحال تو تعلیمی اداروں کی عمارتوں کے مالکان خسارے میں ہیں کہ حکومتی اعلان کے باعث وہ کرایہ ادا نہیں کر رہے اور نہ ہی ملازمین کو تنخواہیں دے رہے ہیں۔ ان کو بس اپنے منافع سے غرض ہے۔ بہتر عمل یہ ہے کہ وزیرتعلیم اِس تمام معاملے کو ایک پیکیج کے طور پر تفصیلی فیصلے کے لئے زیر غور لائیں اور معقول فیصلے کریں، جو طلباء و طالبات کے ساتھ ساتھ والدین اور ملازمین کی بہتری اور تحفظ کے لئے بھی مثبت ہوں۔

مزید :

رائے -اداریہ -