فیس بک سے مواد ہٹانے کی درخواست دینے والے ممالک میں پاکستان کا دوسرا نمبر

  فیس بک سے مواد ہٹانے کی درخواست دینے والے ممالک میں پاکستان کا دوسرا نمبر

  

نیویارک(این این آئی)فیس بک کی جاری کردہ ٹرانسپیرنسی رپورٹ میں بتایاگیا ہے کہ جولائی تا دسمبر 2019 کے دوران فیس بک کی جانب سے دنیا بھر سے 15 ہزار 826 مواد پر پابندیاں عائد کی گئیں جن میں سے روس، پاکستان اور میکسیکو عالمی سطح پر اس کے آدھے حصے کے ذمہ دار ہیں۔ میڈیا رپورٹس کے مطابق 2019 کی دوسری ششماہی میں فیس بک نے پاکستان کی درخواست پر 2 ہزار 300 سے زائد مواد کو ہٹایا جو روس کے 2ہزار 900 درخواستوں کے بعد دوسرا نمبر ہے۔فیس بک کی رپورٹ کے مطابق کسی بھی چیز کو اس کی مواد کی پالیسیوں کی خلاف ورزی کرنے پر نہیں ہٹایا گیا تھا بلکہ پاکستان کے سائبر کرائم قانون کے تحت ہٹایا گیا۔فیس بک نے کہا کہ ہم نے پاکستان ٹیلی کمیونکیشن اتھارٹی کے ذریعہ پولیو ویکسین، توہین مذہب، عدلیہ مخالف مواد، کالعدم تنظیمیں جو علیحدگی پسند، بدنامی اور ملک کی آزادی کی مذمت کی حامی ہیں، کے خلاف پاکستان میں ان مواد پر پابندیاں عائد کیں۔کمپنی نے کہا کہ جولائی تا دسمبر 2019 کے دوران اس نے پاکستانی حکومت کی جانب سے ہتک عزت کی نجی اطلاعات کے جواب میں پانچ مواد تک رسائی کو بھی محدود کیا۔مجموعی طور پر حکومت کی جانب سے مواد کو ہٹانے کی درخواستیں 2019 کی پہلی ششماہی کے مقابلے میں اس مدت کے دوران کم ہوئیں۔

فیس بک

مزید :

صفحہ آخر -