ملک بھر کے 33تعلیمی بورڈز نے ون سٹیپ پرموشن فارمولے کو مسترد کردیا

      ملک بھر کے 33تعلیمی بورڈز نے ون سٹیپ پرموشن فارمولے کو مسترد کردیا

  

لاہور(لیاقت کھرل) ملک بھرکے33تعلیم بورڈز کے چیئرمینوں نے نویں، دسویں، گیارہویں ا وربارہویں جماعت کے 70لاکھ سے زائد طلباء وطالبات کو ون سٹیپ پرموشن دینے کے فارمولے کو مسترد کرتے ہوئے سفارشات پیش کی ہیں کہ امتحانات کمپوزٹ سسٹم کے تحت لیے جائیں جس میں پنجاب کے 9تعلیمی بورڈز کے 41لاکھ طلباء طالبات کوبھی اگلے گریڈ میں پرموٹ کرنے کی مخالفت کی گئی ہے۔وفاقی وزیرتعلیم شفقت محمود کی زیرصدارت گزشتہ روز آزادکشمیر سمیت ملک بھرکے تعلیمی بورڈزکے چیئرمینوں کے آن لائن ہونے والے اجلاس میں شفارشات پیش کی گئیں جس کا باقائد ہ جائزہ لینے کے بعدوفاقی وزیرتعلیم نے فیصلہ کیا کہ آزاد کشمیرسمیت چاروں صوبوں کے صوبائی وزرااورچیئرمینوں کی تیارکردہ سفارشات وزیراعظم پاکستان کو آج پیش کی جائیں گئیں جس کے بعد کل جمعۃ المبارک کواعلان کیا جائے گا کہ نویں،دسویں،گیارویں اوربارویں کلاسزکے طلباء طالبات کے امتحانات منسوخ کرکے انہیں ون سٹیپ فارمولے کے تحت اگلی کلاسز میں پرموٹ کیا جاتاہے یا کہ میٹرک اورانٹرمیڈیٹ کے طلباء طالبات کے امتحانات لیے جاتے ہیں۔ذرائع نے بتایا ہے کہ گذشتہ روزوفاقی وزیرتعلیم کی زیرصدارت ہونے والے آن لائن اجلاس میں صوبائی وزیرتعلیم سندھ نے وفاقی حکومت کی جانب سے طلباء طالبات کو بغیرامتحانات لیے اگلی کلاسز میں پاس کرنے کے فارمولے کو مکمل طورپر مسترد کردیا اورطلباء طالبات کے باقائد ہ امتحانات لینے کی شفارشات پیش کیں اس طرح صوبائی وزیرتعلیم پنجاب راجہ یاسرہمایوں کی زیرصدارت ایک روز قبل تیار کی گی شفارشات میں بھی آزاد کشمیرسمیت پنجاب بھر کے9تعلیمی بورڈزکے 41لاکھ طلباء طالبات کے امتحانات لیے بغیراگلی کلاسز میں پرموٹ نہ کرنے کی تجویز دی ہے۔صوبائی وزیرتعلیم راجہ یاسر ہمایوں اوروزیرتعلیم مراد راس کی باہمی مشاورت سے پنجاب بھر کے 9تعلیمی بورڈزمیں 41لاکھ طلباء وطالبات کی اگلی کلاسز میں ون سٹیپ فارمولے یاامتحانات لینے کے حوالے سے جو شفارشات تیارکی گئی ہیں اس میں کہا گیا ہے کہ چونکہ میٹرک(دسویں)جماعت کے امتحانات ہوچکے ہیں اورصرف پریکٹیکلز کے پیپرز لینے باقی ہیں اس لیے دسویں جماعت کے پیپرز کی مارکنگ کی اجازت دی جائے اورباقائدہ رزلٹ تیار کرکے اعلان کرنے کی تجویزآن لائن اجلاس میں پیش کی گئی ہے جبکہ سیکنڈایئر کے طلباء کو رعایتی نمبرز دیے جائیں اوراگرامید وارکو یہ تجویزقبول نہ ہوتواگلے سال 2021کے سالانہ امتحانات میں دوبارہ امتحان دینے کی اجازت ہوگی۔وفاقی حکومت نے کوروناوباء کے لاک ڈان کی وجہ سے تمام تعلیمی ادارے بند کررکھے ہیں جس کی وجہ سے میٹرک اورانٹرمیڈیٹ کے امتحانات نہیں ہوسکے ہیں جس پر وفاقی حکومت نے ملک بھر کے 33تعلیمی بورڈز کے نویں، دسویں، گیارویں اوربارویں جماعت کے70لاکھ سے زائد طلباء وطالبات کوامتحان لیے بغیرون سٹیپ فارمولے کے تحت پرموشن دینے کا اعلان کررکھا ہے اس سلسلہ میں وفاقی وزارت تعلیم نے ملک بھر کے تمام تعلیمی بورڈز سے شفارشات طلب کیں توصوبائی حکومتوں نے وفاقی حکومت کے ون سٹیپ فارمولے کومسترد کردیا ہے اورگزشتہ روز وفاقی وزیرتعلیم کی زیرصدارت ملک بھر کے تعلیمی بورڈز (آئی بی سی سی)کے آن لائن اجلاس میں وفاقی حکومت کے فیصلے کے خلاف پھٹ پڑے۔جس میں آن لائن اجلاس کے دوران پنجاب بھر کے 9تعلیمی بورڈز کی تیارکردہ شفارشات پیش کی گئیں جس میں کہا گیا کہ وفاقی وزارت تعلیم کے ون سٹیپ فارمولے کے تحت طلباء وطالبات کو اگلی جماعتوں میں پرموٹ کرنے کے اعلان سے بچوں میں مایوسی پھیلی ہے اوراس میں پنجاب بھرکے 9تعلیمی بورڈزکے چیئرمینوں پر مشتمل پی بی سی کے چیئرمین حافظ محمد شفیق نے تیارکردہ شفارشات کا آن لائن اجلاس میں ذکرکرتے ہوئے بتایا کہ میٹرک اورانٹرمیڈیٹ کے امتحانات لینے،منسوخ کیے جانے اور اگلے گریڈ میں پرموٹ کرنے سمیت 11مختلف کیٹگریزپر مشتمل شفاشات تیارکی گئی ہیں جس میں آن لائن اجلاس میں صوبے کے تعلیمی بورڈز کی جانب سے بتایا گیا کہ پنجاب بھر کے نویں جماعت کے طلباء وطالبات کے اگلے سال دسویں جماعت کے سالانہ امتحانات 2021 میں کمپوزٹ سسٹم کے تحت امتحانات لیے جائیں۔میٹرک کے امتحانات چونکہ لیے جا چکے ہیں اور ان کے پیپروں کے مارکنگ کی اجازت دی جائے اوراس میں باقاعدہ میٹرک کے رزلٹ کا اعلان کرنے کی اجازت دی جائیں اسی طرح دسویں کے امتحانات کا رزلٹ تیا ر کرتے وقت ایف ایس سی پری میڈیکل اورانجینئرنگ سمیت کمپیوٹرسائنس کے پریکٹیکل نمبرز تھیوری کے مطابق اوسطً دیئے جائیں۔اسی طرح گیارویں جماعت کے طلباء طالبات کوسکینڈ ایئر میں پرموشن دینے کے لئے رعایتی نمبرز دے کربارویں جماعت میں پاس کرنے کی تجویز دی گئی ہیں تاہم اس میں کہا گیا ہے

مسترد

مزید :

صفحہ اول -