پریکٹسنگ لائسنس نہ ملنے پر ہاؤس آفیسر ز کا نشتر انتظامیہ کیخلاف احتجاج

  پریکٹسنگ لائسنس نہ ملنے پر ہاؤس آفیسر ز کا نشتر انتظامیہ کیخلاف احتجاج

  

ملتان(نمائندہ خصوصی)نشتر میڈیکل یونیورسٹی کے سو کے قریب ہاوس افیسر ڈاکٹرز کو ہاوس جاب مکمل کرنے کے بعد بھی پریکسٹنگ لائسنس نہ مل سکا, ڈاکٹرز کا نشتر انتظامیہ اور پی ایم ڈی سی کے خلاف پریس کلب کے سامنے احتجاج،پی ایم اے کے وفد کی بھی شرکت (بقیہ نمبر37صفحہ7پر)

تفصیل کے مطابق نشتر میڈیکل یونیورسٹی سے میڈیکل کی پانچ سال کی تعلیم مکمل کرنے اور ایک سال ہسپتال میں ہاوس جانب کرنے والے ہاوس آفیسر ڈاکٹرز نے پی ایم ڈی سی سے رجسٹریشن نہ ہونے پر پریس کلب ملتان کے باہر احتجاج کیا، اس دوران ڈاکٹرز کی جانب سے نشتر انتظامیہ کے خلاف شدید نعرے بازی کی گئی،اس موقع پر ڈاکٹر صہیب قدوس اور دیگر کا کہنا تھا کے پانچ سال تعلیم مکمل کی،ایک سال ہاوس جاب کی پر ابھی تک ہمارا مستقبل تاریک ہے نشتر انتظامیہ انکی بات سننے کو تیار نہیں اور اس حوالے سے تاحال کسی قسم کی پیش رفت نہیں کی گئی جس کے باعث احتجاج کرنے پر مجں ور ہیں،احتجاجی مظاہرے کے دوران ڈاکٹرز نے روڈ بلاک کر دیا،ادھر پاکستان میڈیکل ایسوسی ایشن کے صدر پروفیسر ڈاکٹر مسعود الروف ہراج کی ہدایت پر پی ایم اے کے وفد نے بھی ڈاکٹروں سے اظہار یکجہتی کے لئے احتجاج میں شرکت کی،اس موقع پر ڈاکٹر ذوالقرنین حیدر،ڈاکٹر وقار نیازی اور دیگر کا کہنا تھا کہ پی ایم ڈی سی انتظامیہ کے مطابق انکو ڈاکٹرز کے دستاویزات ہی موصول نہیں ہوئے جبکہ نشتر یونیورسٹی انتظامیہ کے مطابق دستاویزات بھجوائے جا چکے ہیں،انتظامی نا اہلی کے باعث سو کے قریں ڈاکٹروں کے مستقبل پر سوالیہ نشان ہے جبکہ نشتر انتظامیہ بات تک سننے کو تیار نہیں ہے۔

احتجاج

مزید :

ملتان صفحہ آخر -