پولیس اہلکاروں کے مبینہ دھکے سے موٹر سائیکلوں میں تصادم‘ 4افراد زخمی

پولیس اہلکاروں کے مبینہ دھکے سے موٹر سائیکلوں میں تصادم‘ 4افراد زخمی

  

ڈہرکی(نامہ نگار) ڈہرکی کے قریب قومی شاہراہ پر پولیس اہلکاروں نے موٹر سائیکل سواروں کو روکنے کے بجائے مبینہ طور پر دھکا دے کر روڈپرگرا دیا ایک عورت سمیت چار افراد سخت زخمی حالت میں اسپتال منتقل مرد اور عورت کی ٹانگیں ٹوٹ گئیں. پولیس ایسے واقع سے انکاری تفصیلات کے مطابق ڈہرکی تھانے کی حدود گاؤں حافظ سلیمان کے مقام قومی شاہراہ پر اوباڑو پولیس کے بد مست اہلکاروں نے موٹرسائیکل سواروں کو روکنے کے بجائے گراتے رہے جس (بقیہ نمبر37صفحہ6پر)

کے نتیجے میں ایک عورت سمیت چار افراد سخت زخمی تشویشناک حالت میں رحیمیارخان اسپتال منتقلگرنے کی وجہ سے موٹر سائیکل سوار زخمی اوباڑو شمس چھپری کے رہائشی فتح محمد ملک اور اس کی بیوی کی ٹانگیں ٹوٹ گئی جبکہ اوباڑو کے گاؤں صالح چاچڑ کے رہائشی زخمی الل? وسا?و چاچڑ اور محمد شریف چاچڑ کو سر بازو اور ٹانگوں میں چھوٹیں لگیں چاروں زخمیوں کو رحیمیارخان اسپتال منتقل کر دیا گیا ہیڈہرکی سیول اسپتال میں زخمی محمد شریف چاچڑ نے میڈیا سے بات کرتے ہوئے کہا کہ چند روز قبل ہماری برادری کے لوگ مجھ سے لڑے تھے جس کے باعث میرا ہاتھ ٹوٹ گیا تھا جس کی فریاد میں اوباڑو تھانے لے کر گیا لیکن میری داد رسی نہ ہوئی تو میں عدالت چلا گیا میں اور الل? وسا?و آج عدالت پیشی سے واپس گھر آ رہے تھے تو آدھی بنگلو کے مقام پر ہمیں اوباڑو پولیس کے اہلکار صفدر چاچڑ ممتاز چاچڑ اور ایک دوندھو برادری کے اہلکار نے لات سے ہماری موٹر سائیکل کو دھکا دیا تو ہم قریب والی موٹر سائیکل سے جا لگے جس کے باعث وہ بھی گر گئے جن کی ٹانگیں ٹوٹ گئی ہیں ہمیں وہاں سے موٹر وے پولیس نے ایمبولینس کے ذریعے ڈہرکی اسپتال منتقل کیا واقع کی این سی ڈہرکی تھانے پر درج کر لی گئی ہیدوسری جانب اوباڑو تھانے کے ہید محرر غلام محمد لغاری کا کہنا ہے کہ ہمارے تھانے کے اہلکاروں نے انہیں دھکا دے کر نہیں گرایا بلکہ اہلکار صفدر چاچڑ ایس ایچ او کے ساتھ ان کے گاؤں سوبھو دیرو گئے ہوئے ہیں وہ یہاں پر موجود ہی نہیں ہیں ان کا آپس میں جھگڑا چل رہا ہے ایکسیڈنٹ کو دوسرا رنگ دے رہے ہیں۔

4افراد زخمی

مزید :

ملتان صفحہ آخر -