شاہد خاقان عباسی نیب میں پیش لیکن کیا پوچھ گچھ اور کارروائی ہوئی؟ تفصیلات سامنے آگئیں

شاہد خاقان عباسی نیب میں پیش لیکن کیا پوچھ گچھ اور کارروائی ہوئی؟ تفصیلات ...
شاہد خاقان عباسی نیب میں پیش لیکن کیا پوچھ گچھ اور کارروائی ہوئی؟ تفصیلات سامنے آگئیں

  

اسلام آباد(ویب ڈیسک) ایل این جی کیس میں سابق وزیر اعظم اورن لیگی رہنما شاہد خاقان عباسی نیب میں پیش ہوگئے، نیب نے پوچھ گچھ کے بعد ایک اور سوالنامہ دے دیا۔

تفصیلات کے مطابق نیب راولپنڈی پنڈی کے نوٹس پر شاہد خاقان عباسی نیب دفتر پیش ہوئے اور ایک بار پھر ایل این جی کیس میں اپنا ابتدائی بیان ریکارڈ کرا دیا۔ نیب کی انویسٹی گیشن ٹیم نے شاہد خاقان عباسی کو سوالنامہ دے دیا جس میں ضمنی ریفرنس کے لیے اکٹھے کیے گئے شواہد پر سوال پوچھے گئے۔ ٹیکس، بنک اکاو¿نٹس کیس کی تفصیل، اہلخانہ کے اثاثوں کا ریکارڈ بھی مانگ لیا گیا۔سوالنامے میں کہا گیا کہ اکاو¿نٹ میں اربوں روپے کی ٹرانزیکشنز کس مد میں ہوئیں ؟ ٹرانزیکشنز ایل این جی معاہدوں کے دوران ہوئیں ؟ جسمانی ریمانڈ کے دوران جن سوالات کے جواب نہیں دیئے گئے وہ بھی دیں۔

سابق وزیراعظم شاہد خاقان عباسی نے نیب دفتر میں پیشی کے بعد میڈیا سے گفتگو کرتے ہوئے کہا کہ نیب نے ایک اور سوالنامہ دیا ہے جس کا تحریری جواب دونگا، نیب نے اثاثوں سے متعلق سوالات کیے ہیں، نیب نے ٹیکس کے بارے میں پوچھا ہے کہ دیا ہے یا نہیں ؟ سال 2000 سے میں نیب کا گاہک ہوں، ، نیب والے راضی نہیں ہوتے ہیں۔ انہوں نے کہا کہ چئیرمین نیب میٹنگ کرینگے اور پھر مجھے گرفتار کروا دیں گے۔انہوں نے کہا کہ احتساب کسی کی ذاتی خواہش کے مطابق نہیں ہونا چاہئیے ،ہم برداشت کرلیں گے یہ نہیں کرسکیں گے۔گھر بیٹھے ہوں تو نیب کچھ نہیں کہتا اور جب دوپریس کانفرنس کرلیں تونیب بلالیتا ہے۔

نیب نے ایل این جی کیس میں عبوری ریفرنس احتساب عدالت میں دائر کر رکھا ہے، جس میں موقف اپنایا گیا ہے کہ ایل این جی ریفرنس اختیارات کے غلط استعمال پر بنایا گیا۔

مزید :

علاقائی -اسلام آباد -