اپوزیشن چاہتی ہے کہ معیشت تباہ ہوجائے اور ۔۔۔وزیر اطلاعات شبلی فراز نے حزب اختلاف پر سنگین الزام عائد کردیا

اپوزیشن چاہتی ہے کہ معیشت تباہ ہوجائے اور ۔۔۔وزیر اطلاعات شبلی فراز نے حزب ...
 اپوزیشن چاہتی ہے کہ معیشت تباہ ہوجائے اور ۔۔۔وزیر اطلاعات شبلی فراز نے حزب اختلاف پر سنگین الزام عائد کردیا

  

اسلام آباد (ڈیلی پاکستان آن لائن)وفاقی وزیر اطلاعات سینیٹرشبلی فراز نے کہا ہے کہ قرضوں میں جکڑا ملک عالمی وبا کامقابلہ کررہا ہے،اپوزیشن بلیم گیم نہ کھیلے،کورونا وبانہ صرف پاکستان بلکہ پوری دنیا کامسئلہ ہے،پاکستان میں کورونا کیسز دوسرے ممالک سے بہت کم ہیں،اشرافیہ وہ ہے جو قانون سے بالاتر سمجھا جاتا ہے، بیمار ہو تو بیرون ملک جاتا ہے، جب اِن سےسوال پوچھےجاتےہیں تو یہ کہتے ہیں کہ سیاسی انتقام کا نشانہ بنایا جارہا ہے، نیب کے چیئرمین سے لیکر چپڑاسی تک ایک بھی بندہ ہمارا نہیں لگایا ہوا،اپوزیشن چاہتی ہے کہ معیشت تباہ ہوجائے اور ان کو این آر او مل جائے ۔

سینیٹ میں کورونا صورت حال پر بحث کے دوران اظہار خیال کرتے ہوئے شبلی فراز نے کہا کہ کورونا وائرس پاکستان کاہی نہیں پوری دنیاکامسئلہ ہے، کورونا کے خلاف فرنٹ لائن پر لڑنے والوں کو خراج تحسین پیش کرتا ہوں، پاکستان میں کورونا مریضوں کی تعداد30ہزارسے تجاوز کرگئی اور اموات ہزار سے کم ہے، اللہ کا کرم ہے پاکستان میں کورونا سے ہلاکتیں کم ہیں،امید ہے کہ عمران خان کی قیادت میں ہم اس بحران سے بھی نکل جائیں گے۔شبلی فراز نے کہا کہ لاک ڈاون سے مڈل کلاس اور مزدور طبقہ زیادہ متاثر تھا، احساس پروگرام کے تحت 100 ارب روپے سے زائد تقسیم ہوچکے ہیں،بازاروں میں ایس اوپیز کی خلاف ورزی دیکھ رہے ہیں، غیرذمہ داری کا ثبوت دیا گیا تو ہمارا انجام اچھا نہیں ہوگا، عوام احتیاط کرے اور ایس او پیز پر عمل کرے، دو تین مہینوں کی بات ہے ایس او پیز پر عمل کریں، نہیں تو ایک بار پھر دکانیں بند ہوجائیں گی۔

انہوں نے کہا کہ مشاہداللہ کہتے ہیں کہ احساس پروگرام میں احسن اقبال کے نام بھی پیسہ آیا، ازراہ تعفن کہتا ہوں یہ نام آپ نے ہی ڈلوایا ہوگا کہیں کا پیسہ آپ نہیں چھوڑتے، اشرافیہ وہ ہے جو قانون سے بالاتر سمجھا جاتا ہے بیمار ہو تو بیرون ملک جاتا ہے۔وفاقی وزیر شبلی فراز  نے کہا کہ اپوزیشن کے پاس کورونا کا کیا پلان ہے؟اپوزیشن بتائے کیا ہم پورے ملک میں لاک ڈاؤن کرفیو لگا دیں؟ اجلاس بلا کر اپوزیشن لیڈر اجلاس میں آئے کیوں نہیں؟کل شہزاد اکبر نے بھی دس سوال پوچھے جواب نہیں آئے، پارٹی فنڈز ذاتی اکاؤنٹس میں کیسے چلے گئے؟، نیب کے چیئرمین سے لیکر چپڑاسی تک ایک بھی بندہ ہمارا نہیں لگایا ہوا، جب ان سے سوال پوچھے جاتے ہیں تو یہ کہتے سیاسی انتقام کا نشانہ بنایا جارہا ہے، اپوزیشن چاہتی ہے کہ معیشت تباہ ہوجائے اور ان کو این آر او مل جائے۔

مزید :

قومی -