عدالتی احاطوں میں قائم کینٹینوں پر مہنگی اور غیر معیاری اشیاء کی فروخت: سائلین پریشان 

عدالتی احاطوں میں قائم کینٹینوں پر مہنگی اور غیر معیاری اشیاء کی فروخت: ...

  

لاہور(کامران مغل)انصاف کے ایوانوں میں سائلین کے ساتھ ظلم کی انتہاء،عدالتی احاطوں میں قائم کینٹیوں پر موجودعملہ حصول انصاف کے لئے آنے والوں کی جیبوں پر ہاتھ صاف کرنے لگا، شہری سخت گرمی میں "ہیٹ ویو"کے خطرات کے باجود ٹھندا پانی نہ ملنے پرناقص اورغیرمعیاری منرل واٹر کی بوتلیں خرید کر  پیاس بھجانے لگے۔تفصیلات کے مطابق سیشن کورٹ لاہور میں 4کینٹینیں قائم ہیں جبکہ ایوان عدل میں تین اس کے علاوہ ضلع کچہری ماڈل ٹاؤں کچہری اور کینٹ کچہری میں متعدد کینٹینیں قائم ہیں،جہاں پرکھانے پینے کی اشیاء اکثر بازار سے زائد نرخوں پر مہیا کی جاتی ہیں جبکہ ان اشیاء کے حفظان صحت ہونے کی بھی کوئی ضمانت نہیں جبکہ ان کینٹینوں پر چیک اینڈ بیلنس کا کوئی نظام نہیں،جیلوں سے آئے ہوئے قیدیوں سے لے کران سے ملاقات کے لئے آنے والے سائلین بھی مہنگی اور غیر معیاری اشیاء خریدنے پر مجبور ہیں، اس حوالے سے عدالتوں میں آنے والے شہریوں حسیب،اسامہ،محمدریاض، ناصر،ضیغم عباس اورمشتاق احمدنے پاکستان سے گفتگو کرتے ہوئے کہا کہ سیشن کورٹ سمیت دیگر مختلف کچہریوں میں جگہ جگہ کینٹینوں کی بھر مار ہے،یہ تمام کی تمام کینٹینیں مبینہ طور پرٹھیکiداروں نے حاصل کر رکھی ہیں جو یہاں پرعرصہ دراز سے برجمان ہیں،باہرچائے کا ریٹ30ہے جبکہ یہاں پر 50روپے وصول کیاجاتاہے،اسی طرح جو سالن /دال کی پلیٹ باہر سے 70روپے کی ملتی ہے یہاں 100سے 150روپے تک ہے،پانی کی بوتل 60روپے میں ملتی ہے جوباہر کی قیمت سے دگنی ہے اور وہ بھی ناقص کوالٹی کی،شہریوں نے مزید کہا ک سخت گرمی میں اپنی پیاس بھجانے کے لئے ٹھنڈا پانی نہ ملنے پرناقص اورغیر معیاری منرل واٹر کی بوتلیں مہنگے داموں خرید کر پینے پر مجبورہیں،کینٹین کے اردگردجگہ جگہ گندگی کے ڈھیرلگے ہوئے ہیں،کھانے پینے کی اشیاء غیر میعاری ہونے کے ساتھ ساتھ بازار سے زائد نرخوں پر فروخت کرجارہی ہیں  کینٹینوں پرصفائی کا انتظام بھی انتہائی ناقص ہے،کینٹینوں پر اکثر مکھیوں کی بھر مار ہے جس کے باعث کھانا کھانا انتہائی مشکل ہوتاہے  اس حوالے سے پاکستان بار کونسل کے سابق کوارڈنیٹر مدثر چودھری ایڈووکیٹ،مرزاحسیب اسامہ،اخترعلی چشتی نے کہا کہ یہ بات سچ ہے کہ ان کنٹینوں پر اشیا کی وہ کوالٹی دستیاب نہیں جوہونی چاہیے، من مانے ریٹس بھی سائلین سے لئے وصول کئے جاتے ہیں جس کی وہ مذمت کرتے ہیں،انہوں نے کہا کہ متعلقہ انتظامیہ کو اس پر نوٹس لینا چاہیے اور جو بھی ناقص اشیاء خوردونوش بیچنے میں یا زائد نرخ وصول کررہا ہو تو اس کے خلاف بلا تفریق کارروائی عمل میں لائی جائے،عدالتوں میں آنے والے سائلین نے حکام بالا سے اپیل کی ہے کہ مذکورہ کینٹینوں پر کھانے کے معیار کو بہتر بنانے کے لئے عملی اقدامات کئے جائیں۔

مہنگی، غیرمعیاری اشیاء 

مزید :

صفحہ آخر -