لندن میں مشاورت جاری ، وزیراعظم کے دورے میں ایک روزہ توسیع، عمران خان کیخلاف کرپشن کے کئی کیسز ، گرفتار کیا جا سکتا ہے : وزیر داخلہ 

لندن میں مشاورت جاری ، وزیراعظم کے دورے میں ایک روزہ توسیع، عمران خان کیخلاف ...

  

        لندن(مانیٹرنگ ڈیسک، نیوزایجنسیاں ) وزیراعظم شہباز شریف اور ن لیگی قائد نواز شریف کی ایک اور اہم ملاقات ہوئی، ملک کی معاشی صورتحال پر تبادلہ خیال کیا گیا اور بحالی کے اقدامات پر بھی مشاورت کی گئی۔ وزیراعظم شہباز شریف سابق وزیراعظم نواز شریف سے تیسری ملاقات کے لئے حسن نواز کے دفتر میں پہنچے۔اس موقع پر وفاقی وزیر داخلہ رانا ثناءاللہ نے کہا کہ دورے میں ایک دن کی توسیع مزید مشاورت کیلئے کی گئی، اگر شہباز شریف کل عدالت نہ پہنچ سکے تو ایک دن کی غیر حاضری کی درخواست دے دیں گے، ڈالر کی بڑھتی قیمت گزشتہ حکومت کی معاشی تباہی کا نتیجہ ہے، عمران خان نوجوانوں کو گمراہ کر رہا ہے۔فاقی وزیر داخلہ رانا ثنا اللہ نے کہا ہے کہ اتحادیوں سے مشاورت کے بعد فیصلہ کریں گے عمران خان کو اسلام آباد آنے دینا ہے یا نہیں؟ذرائع ابلاغ سے بات چیت کرتے ہوئے پاکستان مسلم لیگ (ن) کے مرکزی رہنما رانا ثنا اللہ نے کہا کہ ہم اپنے اتحادیوں سے مشورہ کریں گے اور مشاورت کے بعد فیصلہ کریں گے وفاقی وزیر داخلہ رانا ثنا اللہ نے کہا کہ عمران خان کے خلاف کرپشن کے کئی کیسز ہیں انہیںگرفتار کیا جاسکتا ہے، چار سال کالے کرتوت دکھانے والے اب کالی نیت سے بیان بازی کر رہے ہیں وزیر داخلہ نے شیخ رشید کے بیان پر ردعمل دیتے ہوئے کہا کہ ہر روز فوجی قیادت کو دعوت دینے والے نے آج پالش اور برش اٹھالیا ہے، ایک دن گالی، اگلے دن قوالی باس اور چپڑاسی کی سیاسی زندگی کی کل کہانی ہے، اب الیکشن ہی ہوں گے، باس اور چپڑاسی اسی لئے پریشان ہیں، چار سال کالے کرتوت دکھانے والے اب کالی نیت سے بیان بازی کر رہے ہیں۔، ٹی وی سے سیاسی زندگی پانے والے آو¿ٹ ہونے کے بعد نہ صرف وکٹیں لے کر بھاگ گئے بلکہ اب پورا سٹیڈیم گرانا چاہتے ہیں۔رانا ثنا اللہ نے کہا کہ ہمارا ٹریک ریکارڈ ہے ہم عوام پر بوجھ نہیں ڈالتے، تین دن اسی موضوع پر بات ہوتی رہی، شیخ رشید کی اتنی وقعت نہیں کہ اس کی یہاں بات ہوتی، ہم تمام فیصلے اتحادیوں کے سربراہی فورم پر ہی کرینگے، عمران خان نے ملک کو تباہ کر دیا ہے، نہ آئی ایم ایف ہاتھ پکڑا رہا ہے نہ کوئی اور ملک، چار سال میں ملک کا برا حال کر دیا گیا، نواز شریف جلد پاکستان واپس آئیں گے، نواز شریف نے اپنی ذات پر بات نہیں کی بس ملکی صورتحال پر بات کی، مسلم لیگ ن چاہتی ہے نواز شریف آئندہ انتخابات میں پارٹی مہم کی قیادت کریں۔میڈیا سے گفتگو میں وفاقی وزیر داخلہ رانا ثنا اللہ نے کہا کہ عمران خان کے لانگ مارچ کے حوالے سے کوئی مشاورت نہیں ہوئی، وہ جب تاریخ کا اعلان کریں گے تو پھر اس حوالے سے سوچیں گے، شہباز شریف کل عدالت نہ پہنچ سکے تو ایک دن کی غیر حاضری کی درخواست دے دیں گے، ڈالر کی بڑھتی قیمت گزشتہ حکومت کی معاشی تباہی کا نتیجہ ہے، عمران خان نوجوانوں کو گمراہ کر رہا ہے۔۔ وزیر دفاع خواجہ آصف نے کہا کہ ملکی معیشت سے متعلق مسلم لیگ (ن) اہم فیصلے لے چکی ہے، اتحادیوں کو اعتماد میں لے کر اعلان کریں گے۔اس دوران صحافی نے سوال کیا کہ کیا الیکشن اس سال ہوں گے؟ خواجہ آصف نے جواب میں کہا کہ کوئی نجومی نہیں کہ بتا سکوں الیکشن کب ہوں گے، ہم پر دباو¿ صرف پاکستان کی عوام کا ہوسکتا ہے کسی اور کا نہیں، ہم پر صرف ہمارا ووٹر دباو¿ ڈال سکتا ہے کوئی اور نہیں، چاہتے ہیں ملک میں استحکام آئے اور تباہی کا سدباب کیا جا سکے۔وزیر دفاع نے کہا کہ عوام خودمختار ہیں، ہم اور اتحادی اپنا کیس عوام کے سامنے رکھیں گے، 48 گھنٹے میں ہم پاکستان کے عوام کو اعتماد میں لیں گے، جو بھی مشاورت کی ہے اتحادیوں کے سامنے رکھیں گے، ہم تنہا کوئی فیصلہ کرنے کی پوزیشن میں نہیں، اسٹیک صرف مسلم لیگ (ن) کا نہیں دیگر اتحادی جماعتوں کا بھی ہے، جب تک اتحادی آن بورڈ نہیں ہوں گے کسی فیصلے پر نہیں پہنچ سکتے۔خواجہ آصف نے کہا ہے کہ عمران خان نہ کسی ادارے کا ہے نہ پاکستانی عوام کا ہے، وہ اپنی شخصیت کا غلام ہے، پاکستان کے عوام عمران خان پر پابندی لگائیں گے۔ لندن میں میڈیا سے گفتگو کرتے ہوئے خواجہ آصف کا کہنا تھا کہ ہمارے درمیان کوئی ڈیڈلاک نہیں، ہم اکیلے فیصلے نہیں کرسکتے، اتحادیوں کی مشاورت ضروری ہے، یہاں جو مشاورت ہوئی وہ اتحادیوں کے سامنے رکھیں گے، ہم پر صرف پاکستان کے عوام کا دباو¿ اور کسی کا دباو¿ ہم برداشت نہیں کرینگے۔ان کا مزید کہنا تھا کہ عمران خان کی تقریریں ثابت کرتی ہیں اسے جس ہاتھ نے کھلایا اسی کو کاٹا ہے، اس نے کسی سے بھی وفا نہیں کی، گزشتہ چار سال میں جن کی سرپرستی تھی آج انہیں کیخلاف زہر اگل رہا ہے۔وفاقی وزیر ریلوے خواجہ سعد رفیق نے اس موقع پر کہا کہ ہماری پاکستان کی اقتصادیات پر بات ہوئی ہے، نواز شریف پر جھوٹے مقدمات بنا کر ہم سے دور کیا گیا، ہم نے عمران خان کی معاشی تباہی کے حل پر بات کی، عمران خان پہلے مذہب کارڈ کھیلتا رہا اب غداری کارڈ کھیل رہا ہے۔قبل ازیں وفاقی وزیر ریلوے خواجہ سعد رفیق نے کہا ہے کہ امپائر سے مل کر کھیلنے والا شخص سازشوں میں مصروف ہے۔لندن میں میڈیا سے گفتگو کرتے ہوئے خواجہ سعد رفیق نے کہا کہ عمران خان ایک سازشی آدمی ہے، سر سے پاو¿ں تک سازش میں لتھڑا ہوا ہے، یہ شخص ہمیشہ امپائر سے مل کر کھیلتا ہے، 2014 کے دھرنے میں یہ کس امپائر کو آوازیں دیتا تھا۔وفاقی وزیر نے مزید کہا کہ جب ان کو سپورٹ مل رہی تھی تو سب ٹھیک تھا، اداروں نے کہا اب ہم نیوٹرل ہیں، آئین کی بالادستی چاہتے ہیں، کیا نواز شریف پہلے سیاستدان ہیں جن کو ملک سے باہر رہنا پڑ رہا ہے۔۔وزیر ریلوے سعد رفیق نے کہا کہ مسلم لیگ (ن) جلد آپ کو فرنٹ فٹ پر کھیلتے نظر آئے گی، ملک میں افراتفری اور نفرت پھیلانے کی اجازت کسی کو نہیں دیں گے، نواز شریف عنقریب پاکستان میں ہوں گے۔ اے آر وائی نیوز کے مطابق لندن میں مسلم لیگ (ن) کے مشاورتی اجلاس میں قومی اسمبلی کی مدت پوری ہونے پر عام انتخابات کرانے کا فیصلہ کیا گیا ہے۔ الیکشن پر پاکستان تحریک انصاف کے چیئرمین اور سابق وزیر اعظم عمران خان سمیت کسی دباو¿ کو قبول نہ کرنے کا فیصلہ کیا گیا ہے۔اجلاس میں سابق وزیر اعظم میاں نواز شریف نے تحریک انصاف کی قیادت کی گرفتاریاں نہ کرنے کی ہدایت جاری کر دی ہے۔ فیصلہ کیا گیا کہ سابق وزیر خزانہ اسحاق ڈار وزیر خزانہ مفتاح اسماعیل کی رہنمائی کریں گے۔ مفتاح اسماعیل کو آئی ایم ایف سے اچھی ڈیل لانے کا ٹاسک سونپ دیا گیا۔

لندن اجلاس

مزید :

صفحہ اول -