”یہاں جابروں سے ملنا اور تعلق رکھنا ایک فخر سمجھا جاتاہے “جسٹس فائز عیسیٰ کا جوڈیشل کانفرنس سے خطاب

”یہاں جابروں سے ملنا اور تعلق رکھنا ایک فخر سمجھا جاتاہے “جسٹس فائز عیسیٰ ...
”یہاں جابروں سے ملنا اور تعلق رکھنا ایک فخر سمجھا جاتاہے “جسٹس فائز عیسیٰ کا جوڈیشل کانفرنس سے خطاب

  

لاہور (ڈیلی پاکستان آن لائن )سپریم کورٹ کے جسٹس قاضی فائز عیسیٰ نے کہاہے کہ یہاں جابروں سے ملنا اور تعلق رکھنا ایک فخر سمجھا جاتاہے، خواتین کے خلاف جرائم ختم کرنے کیلئے خواتین کی عزت لازم ہے ۔

جسٹس فائز عیسیٰ نے جوڈیشل کانفرنس سے خطاب کرتے ہوئے کہا کہ میں اعتراف کرتاہوں کہ مجھے آج کے موضوع پر مہارت نہیں ،1979 میں جابر نے حدود آرڈننس کے ذریعے مسلمانوں کر بہتر مسلمان بنانے کی کوشش ، 1979 وہی سال تھا جب روس نے افغانستان پر چڑھائی کی ، ہمارے تمام قوانین انگریزی میں ہوتے ہیں، قوانین اردو زبانوں میں کیوں نہین ہوسکتے آج تک سمجھ نہیں آیا ،ریپ کو زنابالجبر کی حدود میں لایا گیا اس غلطی کو درست کرنے میں 27 سال لگے ،کتنی خواتین نے اس دوران تشدد برداشت کیا ،ان کا جواب اللہ کو کون دے گا، خواتین کے خلاف جرائم ختم کرنے کیلئے خواتین کی عزت لازم ہے ، یہاں جابروں سے ملنا اور تعلق رکھنا ایک فخر سمجھا جاتاہے ،

مزید :

اہم خبریں -قومی -