بھتہ خوروں کیخلاف درخواست دینے پر پولیس نے شہری کو بداخلاقی کے مقدمے میں ملوث کر دیا

بھتہ خوروں کیخلاف درخواست دینے پر پولیس نے شہری کو بداخلاقی کے مقدمے میں ...

لاہور (کرائم سیل ) گلشن اقبال پولیس نے کالعدم تنظیم کے نام پر بھتہ مانگنے والوں کے خلاف سیشن عدالت سے اندراج مقدمہ کے لئے رجوع کرنے والے بزرگ دکاندار کو 11سالہ بچے کے ساتھ بداخلاقی کی کوشش کے مقدمے میں ملوث کر دیا۔ پولیس اور بھتہ خوروں کی طرف سے درخواست گزار پر دباؤڈالا جا رہا ہے کہ وہ عدالت سے اندراج مقدمہ کی درخواست واپس لے ورنہ وہ بداخلاقی کی کوشش کا مقدمہ واپس نہیں لیں گے۔ایس پی اقبال ٹاؤن ڈاکٹر محمد اقبال نے کہا کہ اس معاملے کی انکوائری کاحکم جاری کر دیا ہے ۔تفصیلات کے مطابق نشتر بلاک منی مارکیٹ کے دکاندار محمد جمیل نے گلشن اقبال پولیس کو درخواست دی تھی کہ گزشتہ ایک ماہ سے تین سے چار افراد اس کی دکان پر چکر لگا رہے ہیں اور کالعدم تنظیم کے نام پر 5لاکھ روپے بھتے کا مطالبہ کر رہے ہیں اور بھتے کی عدم ادائیگی پر قتل کرنے کی دھمکیاں دے رہے ہیں۔ دکاندار کے مطابق انہوں نے بھتہ خوروں کی ریکی کی تو ان میں سے ایک شخص ذیشان اطہر 531ڈی نشتر بلاک کا رہائشی نکلا جو یہاں کافی عرصے بطور کرایہ دار رہ رہا تھا، اس سار ے وقوعہ کے بارے میں پولیس کو آگاہ کیا گیا اور ان افراد کے خلاف مقدمہ درج کرنے کی درخواست دی گئی ، پولیس کے انکار پر دکاندار نے تحفظ کے لئے اور کالعدم تنظیم کے نام پر بھتہ مانگنے والوں کے خلاف اندراج مقدمہ کے لئے اکتوبر میں سیشن عدالت سے رجوع کیاجس میں عدالت نے 10نومبر سے اپنافیصلہ محفوظ کررکھا ہے ،محمد جمیل نے الزام عائد کیا ہے کہ بھتہ خوروں نے ان کے خلاف عدالت سے رجوع کرنے پر گلشن اقبال پولیس کے سب انسپکٹر اللہ رکھا کو مبینہ طور پر50ہزار رشوت دے کر 11نومبر کی رات کالعدم تنظیموں کے مبینہ کارکن ذیشان اطہر کی درخواست پر اس کے 11سالہ بچے آسان ذیشان کے ساتھ دکان پر سودا سلف کی خریداری کے دوران بداخلاقی کی کوشش کا مقدمہ درج کے دکاندار کو گرفتار کر لیاہے، دکاندار محمدجمیل کا موقف ہے کہ بھری مارکیٹ میں کسی بچے کے ساتھ بداخلاقی کی کوشش کرنے کا کوئی نہیں سوچ سکتا، پولیس نے کالعدم تنظیم کے بھتہ خوروں کو تحفظ فراہم کرنے کے لئے میرے خلاف کارروائی کی ہے اور اب مجھ پر سیشن عدالت سے اندراج مقدمہ کی درخواست واپس لینے کے لئے دباؤ ڈالا جا رہا ہے ۔ ایس ایچ او گلشن اقبال ادریس قریشی کا کہنا ہے کہ بھتہ خوروں کے خلاف عدالت سے رجوع کرنے کامعاملہ ان کے علم میں ہے تاہم رات گئے دکاندار کے خلاف بداخلاقی کی کوشش کا مقدمہ درج ہونے ان کی علم میں نہیں ہے کیونکہ وہ دو دن سے رائیونڈ اجتماع کی سکیورٹی ڈیوٹی پر ہیں ، سب انسپکٹر اللہ رکھا نے مقدمہ درج کرتے وقت اسے اعتماد میں نہیں لیا، ایس پی اقبال ٹاؤن ڈاکٹر محمد اقبال نے کہا کہ اس معاملے کی انکوائری کاحکم جاری کر دیا ہے کہ بھتہ خوروں کے خلاف عدالت سے رجوع کرنے والے دکاندار کے خلاف راتوں رات بداخلاقی کی کوشش کا مقدمہ کیسے درج ہو گیا۔ اس ضمن میں سب انسپکٹر اللہ رکھا کے خلاف انکوائری کا حکم بھی جاری کر دیا گیاہے۔

مزید : علاقائی


loading...