بلدیاتی الیکشن انتخابی ضابطہ اخلاق پر سختی سے عملدرآمد کرنے کا فیصلہ ،پولیس غیر جانبدار رہے گی ،آئی جی

بلدیاتی الیکشن انتخابی ضابطہ اخلاق پر سختی سے عملدرآمد کرنے کا فیصلہ ،پولیس ...

لاہو ر) وقائع نگار خصوصی )صوبے بھر کے 12اضلاع میں بلدیاتی الیکشن کے دوسرے مرحلے پر سکیورٹی انتظامات اورجرائم کی مجموعی صورت حال کا جائزہ لینے کے لئے سنٹرل پولیس آفس لاہور میں ویڈیو لنک آرپی او کانفرنس انسپکٹر جنرل پولیس پنجاب، مشتاق احمد سکھیرا کی سربراہی میں منعقد ہوئی۔کانفرنس میں تمام آرپی اوز ، سی سی پی او لاہور نے شرکت کی جبکہ تمام ڈی پی اوز ویڈیو لنک کے ذریعے کانفرنس میں موجود تھے۔ ایڈیشنل آئی جی ویلفےئر اینڈ فنانس، سہیل خان، ایڈیشنل آئی جی آپریشنز، کیپٹن (ر)عارف نواز،ایڈیشنل آئی جی PHP، ڈاکٹر عارف مشتاق،ایڈیشنل آئی جی ٹریننگ، کیپٹن (ر) عثمان خٹک، ایڈیشنل آئی جیCTD، رائے محمد طاہر، ایڈیشنل آئی جی SPU، محمد طاہر، ایڈیشنل آئی جی سپیشل برانچ پنجاب، فیصل شاہکار، ڈی آئی جی ہیڈ کوارٹرز، فاروق مظہر،ڈی آئی جی انوسٹی گیشن برانچ، شفیق احمد گجر، ڈی آئی جی اسٹیبلشمنٹ I-، اظہر حمید کھوکھر، ڈی آئی جی اسٹیبلشمنٹII-، نواز وڑائچ،ڈی آئی جی ٹیلی کمیونیکیشن، طارق رستم چوہان، AIGفنانس، حسین حبیب امتیازاور AIGلاجسٹکس، ہمایوں بشیر تارڑ کے علاوہ دیگر سینئر افسران نے کانفرنس میں شرکت کی۔آئی جی پنجاب نے تمام فیلڈ آفیسرز کو ہدایات جاری کرتے ہوئے کہا کہ بلدیاتی الیکشن کے دوسرے مرحلے پر پنجاب پولیس ہر صورت غیر جانبدار رہ کر سیکیورٹی کے فرائض ادا کرے گی اور اسلحے کی نمائش پر Zero Toleranceکی پالیسی اپنائی جائے گی اور کسی بھی جماعت کے کسی رکن یا کارکن کو اسلحے کی نمائش کی اجازت نہیں دی جائے گی۔ انہوں نے کہا کہ ہوائی فائرنگ پر مکمل پابندی ہوگی اور کسی اہلکار کیخلاف شکایت ملی تو سخت ترین کاروائی کی جائیگی ۔انہوں نے افسروں پر زور دیا کہ ہر صورت Bullet Lessاور Violance Freeالیکشن کو یقینی بنائیں تا کہ قیمتی جانوں کے ضیاع کو روکا جا سکے۔کانفرنس میں 12اضلاع میں 11ہزار 8سو 62پولنگ اسٹیشنز کوA+، Aاور Bمیں تقسیم کرنے کا فیصلہ کیا گیا اور ان پولنگ سٹیشنز پر 1لاکھ 4ہزار 2سو 4افسر اور اہلکار تعینات کرنے کا فیصلہ کیا گیاجن میں پوسٹ پولنگ ڈیوٹیز کے لئے 5ہزار 4سو 10اہلکار اور موبائل ڈیوٹی پر 14ہزار 6سو 93اہلکار ڈیوٹی کے فرائض انجام دیں گے۔ ان میں پولیس کے 50ہزار 6سو 6، PQRکے 14ہزار9سو37جبکہ سپیشل پولیس کے 38ہزار 6سو61افسر و اہلکار شامل ہیں۔الیکشن کے دوران آرمی کی 44جبکہ رینجرز کی 6کمپنیاں سٹینڈ بائی رہیں گے۔جن اضلاع میں الیکشن منعقد ہو رہے ہیں ان میں گوجرانوالہ، شیخوپورہ، حافظ آباد، منڈی بہاؤ الدین ، اٹک، جہلم،سرگودھا، میانوالی، ٹوبہ ٹیک سنگھ، چنیوٹ، خانیوال اور ساہیوال شامل ہیں۔الیکشن کے بعد Victoryریلیاں اور جلوس نکالنے پر مکمل پابندی ہو گی۔اس کے علاوہ کسی بھی سیاسی امیدوار کو پولنگ سٹیشن کے اندرگن مین لے جانے پر بھی پابندی ہو گی اور پوسٹ الیکشن سیکیورٹی کے لئے 4بجے سیکنڈ شفٹ بھیجی جائے گی اور پولنگ سٹیشن سے 300میٹر تک ووٹرز کے علاوہ کسی کو بھی گروپ کی صورت میں داخلے پر بھی پابندی ہو گی۔کانفرنس میں صوبے بھر کی کرائم کی صورت حال کا تفصیلی جائزہ لیا گیا اور یہ فیصلہ کیا گیا کہ چوری شدہ گاڑیوں کی وارداتوں میں مزید کمی کے لئے باڈرنگ ڈسٹرکٹس میں ان گاڑیوں کے خریداروں کی شناخت کے بعد سخت ترین کارروائی کی جائے گی۔اس کے علاوہ پنجاب پولیس میں بھرتیوں، تعیناتیوں اور تبادلوں میں جعل سازی اور ہر قسم کی ٹمپرنگ کے مکمل خاتمے کے لئے تمام آرپی اوز اور ڈی پی اوز اس مہینے کے آخر تک اپنے ریجنز اور اضلاع میں تمام اہلکاروں کے سروس ریکارڈ کی سکروٹنی مکمل کر کے سرٹیفکیٹ سی پی او میں جمع کروائیں گے اور اس کے علاوہ تمام فیلڈ افسران اپنے دفاتر میں ایک کمرہ الگ سے صرف سروس ریکارڈ کے لئے رکھیں گے اور اسے بنکوں کی طرز پر ڈبل لاک میں رکھنے کا بھی فیصلہ کیا گیا۔آئی جی پنجاب نے فیلڈ افسروں کو ہدایات جاری کیں کہ وہ محکمے میں بیواؤں ، ماؤں، بہنوں اور بچوں کو غیر ضروری دفتری کارروائیوں سے بچانے کے لئے وظیفہ اور پنشن کے لئے ATMکارڈ جاری کرنے کے لئے ڈیٹا اس مہینے کے اندرسی پی او پہنچائیں تا کہ انہیں ATMکارڈ جاری کیے جا سکیں۔

مزید : راولپنڈی صفحہ آخر