شہریوں کیلئے گیس بحران ، مال وصولی کے بعد کمرشل علاقوں میں پریشر بڑھانے کا انکشاف

شہریوں کیلئے گیس بحران ، مال وصولی کے بعد کمرشل علاقوں میں پریشر بڑھانے کا ...

ملتان ( سٹاف رپورٹر) سوئی گیس کی بدترین لوڈشیڈنگ کے باعث بیشتر طلباو طالبات وسرکاری ملازمین صبح ناشتہ کئے بغیر ہی(بقیہ نمبر37صفحہ12پر )

جانے پر مجبور ہو گئے ۔ حکمرانوں کو بددعائیں دینے لگے۔تفصیل کے مطابق سوئی گیس کے بحران کے باعث صارفین مجبور ہو کر لکڑیاں استعمال کرنے پر مجبو ر ہو گئے ہیں کیونکہ ایل پی جی 120سے 130روپے فی کلو فروخت ہو رہی ہے جو غریب اور سفید پوش صارفین کی استطا عت سے باہر ہے ۔ہر سال سردیوں میں سوئی گیس کا بحران درپیش ہوتا ہے ۔ مختلف علاقوں میں موسم سرما میں سوئی گیس نام کو بھی نہیں ہوتی جہاں کے مکین ایل پی جی اور لکڑی استعمال کرنے پر مجبور ہوجاتے ہیں ۔اس سال تو ابھی دسمبر نہیں آیا اور نومبر سے ہی سوئی گیس کی طویل لوڈشیڈنگ شروع ہو چکی ہے ۔ کئی علاقوں میں گیس کا پریشر نہ ہونے کے برابر ہے ۔ ملتان میں رائٹرز کالونی ‘ثمن آباد ‘ گلبرگ کالونی ‘مومن آباد ‘ شریف پورہ ‘ اسلام پورہ ‘عرفات کالونی ‘ لوہار کالونی ‘ ناظم آباد ‘ معصوم شاہ روڈ‘ جان محمد کالونی ‘محمود آباد اوردیگر علاقوں میں سوئی گیس کی بدترین لوڈشیڈنگ کی جا رہی ہے ۔ سوئی گیس صبح ہوتی ہے نہ رات کو ہوتی ہے ۔بتایا گیا ہے کہ سوئی گیس اہلکار وں نے رشوت لے کر کمرشل کنکشن والے علاقوں کا پریشر بڑھا دیا ہے جس کی بنا پر ہوٹل والوں سمیت گیس کا کمرشل استعمال کرنے والوں کا پریشر پورا ہے ۔ حالات صارفین کے دھرنوں اور احتجاجی مظاہروں کی طرف جا رہے ہیں ۔

گیس لوڈشیڈنگ

مزید : ملتان صفحہ آخر