برآمدات کو فروغ دےئے بغیر تجارتی خسارہ کم نہیں ہوگا‘طارق فیروز‘ میاں سلیم

برآمدات کو فروغ دےئے بغیر تجارتی خسارہ کم نہیں ہوگا‘طارق فیروز‘ میاں سلیم

لاہور(نیوزرپورٹر ) انجمن تاجران لاہور کے صدر میاں طارق فیروز و جوائنٹ سیکرٹری میاں سلیم نے کہا ہے کہ برامدات کو فروغ دےئے بغیر تجارتی خسارہ کم نہیں ہوگا، روپے کی ڈی ویلیو ایشن مسئلے کا حل نہیں ، حکومت مقامی انڈسٹری کو مراعات اور سہولیات فراہم کرے، ہماری ایکسپورٹ تقریباً 23 ،24 بلین ڈالر ہے جبکہ امپورٹ 60.898 بلین ڈالر تک پہنچ چکی ہے ، یہ بات انہوں نے گزشتہ روز مقامی ہوٹل میں ہونے والے تاجروں کے ایک اجلاس کے دوران خطاب کرتے ہوئے کہی۔میاں سلیمنے کہاکہ موجودہ حکومت کو معیشت کو استحکام دینے کیلئے مقامی انڈسٹری کیلئے لانگ ٹرم ٹریڈ پالیسیوں کو لانا ہوگااور ہر ماہ برآمدات میں 4 بلین ڈالر اضافہ کرنے کیلئے ٹھوس اقدامات کرنا ہونگے، انہوں نے کہاکہ سابقہ حکومت کے دور میں ٹریڈ پالیسیاں صرف چند مند پسند برآمد کنندگان کو فائدہ دینے کیلئے بنائی جاتی رہی ہیں۔ حکومت فوری طور پر مقامی کو انڈسٹری فروغ دینے پر توجہ دے کیونکہ ملکی کرنسی کو ڈی ویلیو کرنا مسئلے کا حل نہیں ہے ایسا کرنے سے ملک میں مہنگائی کی شرح میں مزید اضافہ ہوتا چلا جائے گا۔ ،لہذا معیشت کو جدید تقاضوں سے ہم آہنگ ہونا چاہیے ، حکومت کو مہنگائی کم کرنے کیلئے خاطر خواہ اقدامات کرنے کی ضرورت ہے ۔انہوں نے کہا کہ مقامی انڈسٹری کیلئے بنیادی ان پٹ سستے داموں فراہم کیا جائے تاکہ ہماری پیداواری لاگت میں کمی لائی جا سکے۔

انہوں نے کہا کہ فیصل آباد کو کسی دور میں پاکستان کا مانچسٹر کہا جاتا تھا جو کہ ایک ٹیکسٹائل شہر ہے وہاں موجودہ انڈسٹری معاشی بحران سے دوچار ہے ، جبکہ موجودہ دور میں بنگلہ دیش ہم سے کاٹن کا راء میٹریل خرید رہا ہے اور ویلیو ایڈیشن کر کے تقریباً 35 بلین ڈالر زرمبادلہ کما رہا ہے ، حکومت کو چاہیے کہ وہ مقامی انڈسٹری کو ویلیو ایڈیشن کی جانب لے کر جائے تاکہ ملک کیلئے زیادہ سے زیادہ زرمبادلہ حاصل کرنے کے مواقعے حاصل ہو سکیں۔

مزید : کامرس