اسرائیل تسلیم کرنے والوں نے پوری قوم کے جذبی ایمانی کو ٹھیس پہنچائی:سید اظہار

اسرائیل تسلیم کرنے والوں نے پوری قوم کے جذبی ایمانی کو ٹھیس پہنچائی:سید اظہار

راولپنڈی(سٹی رپورٹر)تحفظ قبلہ اول کانفرنس سے خطاب کرتے ہوئے چیرمین امن کمیٹی ممتاز مذہبی سکالر علامہ پیر سید اظہار بخاری نے کہا ہے کہ اسرائیل تسلیم کرنے والوں نے پوری قوم کے جذبی ایمانی کو ٹھیس پہنچائی ۔ اسرئیل تسلیم کرنے کا نعرہ لگانے والے یہودی ظلم و جبر میں برابر کے شریک ہیں۔قبلہ اول پر یہودیوں کا حق جیتانے والے ہوش کے ناخن لیں۔وہ دن دور نہیں ،جب پاکستانی علماء قبلہ اول یہودیوں سے واگزار کر کے خود اس میں امامت کرائیں گئے۔ اسرائیل قبضہ گروپ ہے، اسے تسلیم کرنا دھشتگردوں کی حمایت کر نا ہے ۔بیت المقد س جہاں نبی پاک ؐ نے معراج کی رات لاکھوں انبیاء کی امامت کرائی ۔ اس پر یہودیوں کا حق کیسے ہو سکتا ہے ۔یہودی قبلہ اول کے بعد حرمین پر قبضے کی سازشیں کر رہے ہیں ، اورہم قبل اول کو یہودیوں کا حق قرار دے رہے ہیں ۔ اس سے بڑھ کر اور کیا ظلم ہو گا ۔حکومت ابھی ملعونہ آسیہ کے چنگل سے باہر نہیں نکلی ، کہ دوسرا شوشا حدیدہ عاصمیہ نے چھوڑ دیا ۔مشیروں کو لگام نہ دی گئی ، تومصائب کے پہاڑ کھڑے ہو جائیں گے۔ اسرائیل دھشتگردوں کا ہیڈکواٹر اور امریکہ اس کا ہیڈ ماسٹر بناہوا ہے ۔ اس رستے ہوئے ناسور ا ور دھشتگردی کے ہیڈ کواٹر کو تباہ کرنے کیلیے مسلمان جہاد کا ڈنڈا استعمال کریں۔اسرائیلی ظلم کا بازار بند کرنے کیلیے مجاوروں کی نہیں مجاہدوں کی ضرورت ہے ۔ حضرت فاروق اعظمؓ کا جراتمندانہ چہرہ دیکھ کر ہی یہودیوں نے بیت المقدس کی چابیاں ان کی جھولی میں ڈال دی تھی ۔بیت المقدس کی آزادی کیلیے زنانہ نہیں مردانہ قوت بازو کی ضرورت ہے۔بیت المقدس احتجاج نہیں ، جہاد سے آزاد ہو گا ۔ حدیث مبا رک ؐکی روشنی میں اسرائیل کی مکمل تباھی کا وقت اب زیادہ دونہیں رہا ۔اظہار بخاری نے کہا بیت المقدس وکشمیر کی آزادی لازم ملزوم ہے ۔ آج عالم اسلام بے حسی کے ایسے چوراھے پر کھڑا ہے ۔ جہاں اسے عالم کُفر کی سازشوں سے بچانے والا کوئی نہیں ۔ ذلت و رسوائی اور پسپائی اسرائیل کا مقدر ہے ۔ امت مسلمہ اسرائیل کیلیے عزرائیل بن جائے۔ اسرائیلی جارحیت سے روکنے کیلیے احتجاج نہیں ، جہا د کی، مذمت نہیں ، مُرمت کی ضرورت ہے ۔ دنیا کے تین بڑے دھشتگرد شیطا ن امریکہ ، اسرائیل ، انڈیا مظلوم انسانوں کے قاتل ہیں ۔ خطرناک ہتھیار ان ظالموں کے پاس ہیں ۔ اور نام مسلمانوں کا لگا رہے ہیں ۔امت مسلمہ جذبہ جہاد اورایمانی قوت کے اسلحہ سے لیس ہے ۔ جنہیں دنیاء کُفر محسوس تو کر سکتی ہے ۔ لیکن ختم نہیں کرسکتی۔لیکن افسوس یہ ہ کہ مسلمان یہ ہتھیار استعمال کرنے کی صلاحیت کھو چکے ہیں ۔ دنیا کے کافر ہمارے لوہے کی ٹیکنالوجی سے نہیں جذبہ جہاد سے خوف ذدہ ہیں ۔ اسرائیل تسلیم کرنے کا نعرہ لگانے والے اپنا دماغی شُو ٹھیک کریں ۔ پوری قو م قبلہ اول و قبلہ ثانی کا تحفظ خود کرے گی ۔

مزید : راولپنڈی صفحہ آخر