قانون کو ہاتھ میں لینے والا وکیل نہیں ہوسکتا :امان اللہ کنرانی

قانون کو ہاتھ میں لینے والا وکیل نہیں ہوسکتا :امان اللہ کنرانی
قانون کو ہاتھ میں لینے والا وکیل نہیں ہوسکتا :امان اللہ کنرانی

  

اسلام آباد (ڈیلی پاکستان آن لائن)صدر سپریم کورٹ بار امان اللہ کنرانی نے کہاہے کہ قانون کو ہاتھ میں لینے والا وکیل نہیں ہوسکتا ، ہنگامہ آرائی کرنیوالے وکلاءکیخلاف کارروائی میں رکاوٹ نہیں ڈالیں گے ۔

دنیا نیوز کے پروگرام ”نقطہ نظر“ میں گفتگو کرتے ہوئے ہے امان اللہ کنرانی نے کہا کہ پنجاب میں و کلاءجو کررہے ہیں یہ غلط ہے ، وکلا کے اندر بھی بہت سے طبقات ہیں اور عدم تحمل کا مظاہرہ کیا جاتا ہے جو افسوناک ہے ۔ انہوں نے کہا کہ اس پر دکھ ہے جوبندہ قانون کو ہاتھ میں لیتا ہے وہ وکیل نہیں ہو سکتا ، وکیل خود کو قانون کا محافظ سمجھتا ہے ۔ انہوں نے کہا کہ ایسے واقعات پر ذمہ دار وکلا کے خلاف جو بھی کارروائی ہوگی ہم اس میں رکاوٹ نہیں ڈالیں گے ۔ انہوں نے کہا کہ ہائیکورٹ بنچ آئین میں ترامیم سے بنتے ہیں ۔انہوں نے کہا کہ میرٹ کا تقاضہ ہے کہ جیسے انڈیا میں کوئی سرکٹ بنچ نہیں ہے ، یہ بنچ بنانے سے عدلیہ کا معیار گر جاتاہے ۔ یہ غلط کام سندھ میں کیاگیاہے جہاں چار ہائیکورٹس بنچ بنے ہوئے ہیں جب ایک جگہ غلط کام کیا جائے گا تو دوسری جگہ بھی لوگ مطالبہ کریں گے ۔ انہوں نے کہا کہ وقت پر ذمہ داران کے خلاف کارروائی نہ ہونا ہمار ا قومی المیہ ہے اور اس کو ہم نے مل کر ٹھیک کرنا ہے ۔

مزید : قومی