جی ایس پی پلس سٹیٹس کی تجدید، دو بڑے یورپی ممالک نے پاکستان کو یقین دہانی کرادی

جی ایس پی پلس سٹیٹس کی تجدید، دو بڑے یورپی ممالک نے پاکستان کو یقین دہانی ...
جی ایس پی پلس سٹیٹس کی تجدید، دو بڑے یورپی ممالک نے پاکستان کو یقین دہانی کرادی

  



لاہور( نمائندہ خصوصی) گور نر پنجاب چوہدری محمدسرور سے فرانس کے سفیر مارک باریٹی اور جر من سفیربر نارڈ شلک نے مشتر کہ ملاقات میں جی ایس پی پلس سٹیٹس کی تجدید کیلئے پاکستان کی بھر پور حمایت کااعلان کر دیا۔

تفصیلات کے مطابق گزشتہ روزروز پہلی بار جر من اور فر انس کے سفیروں نے گور نر پنجاب چوہدری محمدسرور سے مشتر کہ ملاقات کی ہے ملاقات کے دوران جی ایس پی پلس سٹیٹس کی آئندہ سال تجدیدپاکستان میں سر مایہ کاری سمیت دیگر ایشوز کے بارے میں بات چیت کی گئی اور چوہدری محمدسرور نے جر من چانسلر کی جانب سے دورہ بھارت کے دوران مسئلہ کشمیر اجاگر کر نے پر جر من سفیر کا شکر یہ بھی اداکیا۔

گور نر پنجاب چوہدری محمدسرور نے میڈیا سے گفتگو کرتے ہوئے کہا کہ جر من اور فرانس کے سفیر سے ملاقات انتہائی کامیابی ہوئی ہے اور اب تک جی ایس پی پلس کی وجہ سے پاکستان کو15ارب ڈالرز کا فائدہو چکا ہے انشاءاللہ پاکستان میں غیر ملکی سر مایہ کاری میں تیزی کیساتھ اضافہ ہورہا ہے اور دنیا سمجھ رہی ہے کہ پاکستان میں مکمل سکیورٹی اور امن موجود ہے اور سر مایہ کاروں کو بھی تمام سہولتوں کی فراہمی یقینی بنائی جارہی ہے۔

بعدازں گور نر پنجاب چوہدری محمدسرور مقامی ہوٹل میں ڈیموکریسی انٹر نیشنل رپورٹنگ اور پنجاب اسمبلی کے زیر اہتمام '' پاکستان تر جیحات برائے انسانی حقوق''کے موضوع پر سیمینار میں شر یک ہوئے اس موقع پر ڈ پٹی سپیکر پنجاب اسمبلی سردار دوست مزاری، ڈپٹی سپیکر خیبر پختونخواہ اسمبلی محمود جان ،ڈیموکر یسی رپورٹنگ انٹر نیشنل کے کنٹری ہیڈ جاویداحمد ملک اور صوبائی ہیڈ سمعیہ یوسف ،اراکین پنجاب اسمبلی عائشہ چوہدری، سعدیہ سہیل اور خدیجہ عمر سمیت دیگر بھی موجود تھے۔

گور نر پنجاب چوہدری محمدسرور نے اس موقعہ پر میڈیا سے گفتگو کرتے ہوئے کہا کہ اس میں کوئی شک نہیں کہ حکومت کی کامیاب معاشی پالیسیوں کی وجہ سے غیر ملکی سر مایہ کاروں کا پاکستان پر دن بدن اعتماد بڑھ رہا ہے اور جر من اور فرانس کے سفیروں نے بھی حکومت کی پالیسیوں کو سر اہا ہے۔ انہوں نے کہا کہ لاہور شہر میں بھی جتنی تیزی کیساتھ غیر ملکی سر مایہ کار کام کر رہے ہیں ماضی میں اسکی کوئی اور مثال نہیں ملتی اور مجھے اس بات کی بھی خوشی ہے کہ پاکستان میں سیاحت کو فروغ مل رہا ہے اور انشااللہ ہم صرف پنجاب میں سیاحت کے فروغ سے سالانہ 4/5ارب ڈالرز حاصل کرسکتے ہیں۔

مزید : علاقائی /پنجاب /لاہور