’ایک قتل کرنے کے 15 ہزار روپے ملتے ہیں، اور خون اتنا پسند ہے کہ اب رک نہیں سکتا‘ کرائے کے قاتل کا ناقابل یقین انکشاف

’ایک قتل کرنے کے 15 ہزار روپے ملتے ہیں، اور خون اتنا پسند ہے کہ اب رک نہیں ...
’ایک قتل کرنے کے 15 ہزار روپے ملتے ہیں، اور خون اتنا پسند ہے کہ اب رک نہیں سکتا‘ کرائے کے قاتل کا ناقابل یقین انکشاف

  



بوگوٹا(مانیٹرنگ ڈیسک) جنوبی امریکہ کے ملک کولمبیا میں ایک کرائے کے قاتل نے اپنے اس سفاک پیشے کے متعلق ایسے حیران کن انکشافات کیے ہیں کہ سن کر یقین کرنا مشکل ہو جائے۔ ڈیلی سٹار کے مطابق اس کرائے کے قاتل کی عمر 15سا ل ہے جو عرف عام ’سین تیاگو‘ سے جانا جاتا ہے۔ اس نے ایک انٹرویو میں بتایا ہے کہ اسے ایک شخص کو قتل کرنے کے 90ڈالر (تقریباً 15ہزار روپے) ملتے ہیں اور اسے خون اس قدر پسند ہے کہ اب وہ چاہ کر بھی اس کام کو چھوڑ نہیں سکتا۔

کولمبیا کے شہر میڈلین کے رہائشی سین تیاگو نے بتایا کہ چند سا ل قبل اس کے بھائی کو قتل کر دیا گیا تھا۔ وہ ہر ممکن بھائی کے قتل کا بدلہ لینا چاہتا تھا، چنانچہ اسی کوشش میں اس کا رابطہ میڈلین کے ایک گینگ سے ہوا اور وہ اس گینگ میں شامل ہو گیا۔ اب تک میں اپنے بھائی کے دو قاتلوں کو موت کے گھاٹ اتار چکا ہوں اور مزید دو کی تلاش ابھی کر رہا ہوں۔ اس نے بتایا کہ اب وہ شہر میں منشیات بھی فروخت کرتا ہے اور پیسے لے کر لوگوں کو قتل بھی کرتا ہے۔ اس طرح حاصل ہونے والی رقم وہ اپنے خاندان پر خرچ کرتا ہے۔ اس کی ایک بہن سکو ل میں پڑھتی ہے اور وہ اسی رقم سے اس کا خرچ بھی اٹھاتا ہے۔

مزید : ڈیلی بائیٹس