” یہی حالات رہے تو 3 چار مہینے بعد کوئی وزیر اعظم بننے پر تیار نہیں ہوگا“ حکومت کے اتحادی چوہدری شجاعت نے ہی وزیر اعظم پر بجلیاں گرادیں

” یہی حالات رہے تو 3 چار مہینے بعد کوئی وزیر اعظم بننے پر تیار نہیں ہوگا“ ...
” یہی حالات رہے تو 3 چار مہینے بعد کوئی وزیر اعظم بننے پر تیار نہیں ہوگا“ حکومت کے اتحادی چوہدری شجاعت نے ہی وزیر اعظم پر بجلیاں گرادیں

  



لاہور (ڈیلی پاکستان آن لائن) مسلم لیگ ق کے سربراہ چوہدری شجاعت حسین کا کہنا ہے کہ وزیر اعظم عمران خان کو مہنگائی اور بیروزگاری کے خاتمے پر توجہ دینی چاہیے، اس وقت یہ دونوں مسائل بڑھتے جارہے ہیں اور اگر یہی حالات رہے تو تین 4 مہینے بعد کسی نے وزیر اعظم بننے کیلئے تیار نہیں ہونا۔

نجی ٹی وی کے پروگرام میں گفتگو کرتے ہوئے چوہدری شجاعت حسین کا کہنا تھا کہ عمران خان کے پاس وزیر اعظم، سربراہ مملکت اور تحریک انصاف کے سربراہ کے عہدے ہیں، انہیں دونوں عہدوں کو چھوڑ کر سربراہ مملکت کے طور پر معاملے کو ڈیل کرنا چاہیے اور نواز شریف کو بیرون ملک جانے کی اجازت دینی چاہیے۔

انہوں نے کہا کہ عمران خان ایسے لوگوں کی مت سنیں جو اچھے فیصلوں میں مینگنیاں ڈالنے کی کوشش کر رہے ہیں، وہ اپنے ماتھے پر کلنک کا ایسا ٹیکہ نہ لگنے دیں جسے دھونا مشکل ہوجائے ، انہیں سمجھ جانا چاہیے کہ یہ خراب باتیں ہورہی ہیں، ان لوگوں کی بات نہ مانیں ، عمران خان جس عہدے پر بیٹھے ہیں اس پر انہیں انصاف کرنا چاہیے۔

چوہدری شجاعت حسین نے کہا کہ اس وقت ملک میں مہنگائی اور بیروزگاری بڑھتی جارہی ہے جس کے باعث تین 4 مہینے بعد کسی نے وزیر اعظم بننے کیلئے تیار نہیں ہونا۔ اینکر پرسن ندیم ملک نے حیرت کے ساتھ تکرار کرتے ہوئے کہا کہ 3 مہینے؟ جس پر چوہدری شجاعت نے کہا کہ 6 مہینے کرلیں، 6 مہینے بعد کسی نے وزیر اعظم بننے کیلئے تیار نہیں ہونا۔

مزید : قومی /سیاست /علاقائی