دنیا کو بتادیا،مسئلہ کشمیر حل نہ کیاگیاتوپاک بھارت میں جنگ شروع ہو سکتی ہے: شیریں مزاری

دنیا کو بتادیا،مسئلہ کشمیر حل نہ کیاگیاتوپاک بھارت میں جنگ شروع ہو سکتی ہے: ...
دنیا کو بتادیا،مسئلہ کشمیر حل نہ کیاگیاتوپاک بھارت میں جنگ شروع ہو سکتی ہے: شیریں مزاری

  



اسلام آباد(صباح نیوز)وفاقی وزیرانسانی حقوق شیریں مزاری نے کہاہے کہ دنیا کو بتادیاکہ مسئلہ کشمیرکوحل نہ کیاگیاتوپاکستان اور بھارت درمیان جنگ شروع ہو سکتی ہے ، مقبوضہ کشمیر میں لاک ڈاؤن اور مسلمانوں کی نسل کشی کی دنیا میں مذمت کی جا رہی ہے، پچاس سال بعد اقوام متحدہ کی سیکیورٹی کونسل میں کشمیر پر بات ہوئی، کشمیر کا ہفتہ یورپی پارلیمنٹ میں منایا گیا ،ہمیں مسئلہ کشمیر پر پروپیگنڈے سے پرہیز کرنا چاہیے،سیاسی پوائنٹ سکورنگ کےبجائےکشمیر پرمتحدفرنٹ ہونا چاہیے ، مقبوضہ کشمیر میں خواتین کے ساتھ ظلم کو ماضی کی حکومتوں نے نظر انداز کیا ۔

سینیٹ میں مقبوضہ کشمیرکی موجودہ صورت حال پر بحث سمیٹتے ہوئےوزیرانسانی حقوق شیریں مزاری نے کہاکہ مسلم لیگ کے دور میں جب بھارتی وزیراعظم مودی شادی پر آیا تو کشمیر کا مسئلہ کب اٹھایا گیا تھا؟پہلے کبھی کشمیر کا مسئلہ اس طرح نہیں اٹھایا گیا جو اس حکومت نے اٹھایا ،اب پاکستان پر دہشت گردی کا الزام نہیں لگ رہا بلکہ ہندوستان پر کشمیر لاک ڈاؤن ، مسلمانوں کی نسل کشی کی دنیا میں مذمت کی جا رہی ہے،پہلی دفعہ پچاس سال بعد اقوام متحدہ کی سیکورٹی کونسل میں کشمیر پر بات ہوئی ،کشمیر کا ہفتہ ے یورپی پارلیمنٹ میں منایا گیا ،ہمیں کشمیر کے مسئلے پر پروپیگینڈا سے پرہیز کرنا چاہیے، ستائیس اکتوبر کو یوم سیاہ منایا ، وزیر اعظم کی اقوام متحدہ میں تقریر کو دنیا میں سراہا گیا دنیا نے ہندتوا کا بیانیہ تسلیم کیا ہے،ہماری حکومت نے کشمیر پر موثر بیانیہ دیا ہے جسے دنیا نے مانا ہے، مسلمان ممالک اور چین ہمارے ساتھ کھڑے ہیں، بھارت پر کشمیر کے حوالے سے دباؤ بڑھ رہا ہے، کافی کچھ ہوا ہے اور کافی ہو نا باقی ہے،کشمیر پر ہماری توجہ انسانی حقوق کی خلاف ورزی پر رہی ، اب ہمیں قانونی معاملات پر بھی دیکھنا ہیں،انسانی قوانین کے معاملے کو اگر اٹھائیں تو ہم بھارت کے خلاف جنگی جرائم کے مقدمے کی جانب جا سکتے ہیں ۔انہوں نے کہاکہ  اقوام متحدہ کی کشمیر کے حوالے سے دو قرارداوں میں کہا گیا ہے کہ مقامی الیکشن ، استصواب رائے کا متبادل نہیں آئی سی جے کی مشاورتی رائے لینا بہت اہم ہے آئی سی جے نے مقبوضہ علاقوں کے حوالے سے رائے طے کر رکھی ہے ہماری حکومت جنرل اسمبلی کے ذریعے آئی سی جے کی مشاورتی  ایڈوائزری رائے لے گی، پہلی دفعہ کشمیر میں نسل کشی کی بات دنیا میں گئی ہے۔

انہوں نےکہاکہ مقبوضہ کشمیرمیں خواتین کے ساتھ ظلم کو ماضی کی حکومتوں نے نظر انداز کیا، کشمیر میں خواتین کے ساتھ ریپ کو بطور ہتھیار استعمال کیا جا رہا ہے،ہمیں اقوام متحدہ میں کشمیر میں خواتین کے ساتھ جنسی تشدد کے معاملے کواٹھانا ہو گا،ہم یونیسف کو اس حوالے سےخط بھیج رہے ہیں،ہمارے اقدامات کےحوالے سے کشمیرکامعاملہ مزید اٹھےگا۔انہوں نےکہاکہ ہم دنیاکوباربار کہہ رہے ہیں کہ جنگ شروع ہو سکتی ہے،ایل او سی پرکشمیری شہید ہو رہے ہیں،ہم بین الاقوامی برادری کےساتھ یہ معاملات اٹھارہےہیں، بھارت نے ملٹری تناؤ کے اقدامات شروع کر رکھے ہیں، جنگ شروع ہو جائے تو روکی نہیں جا سکتی ، پاکستان نے بالاکوٹ حملے کو ناکام بنایا ،ائیر فورس کے جواب سے بھارت کو  ہم نےباور کرا دیا ہے کہ جواب دینے کی ہمارے پاس صلاحیت ہے، سیاسی پوائنٹ سکورنگ کے بجائے کشمیر پر متحد فرنٹ ہونا چاہیے۔

مزید : قومی