رواں سال پاکستان سے آم کی درآمد شروع کریں گئے ،آسٹریلین ہائی کمشنر

رواں سال پاکستان سے آم کی درآمد شروع کریں گئے ،آسٹریلین ہائی کمشنر

اسلام آباد (آن لائن) آسٹریلیا کی پاکستان میں ہائی کمشنر میگاریٹ ایڈمن نے کہا کہ آسٹریلیا رواں سال پاکستان سے آم کی درآمد شروع کر دے گا پاکستان کی آم کی کوالٹی کو مزید بہتر بنانے کی ضرورت ہے۔ دنیا کی 72 فیصد ورکنگ ویمن زراعت سے وابستہ ہیں اس طرح آسٹریلیا معاشی ترقی میں خواتین کو شامل کرنے پر زور دیتا ہے۔ ان خیالات کا اظہار انہوں نے اسلام آباد میں آسٹریلین ہائی کمشنر کے زیر اہتمام ہونے والے ایک سیمینار سے خطاب کے دوران کیا انہوں نے کہا کہ ایگریکلچر سیکٹر لنکچ پروگرام کے ذریعہ غربت میں کمی آئی ہے اور معاشی ترقی میں اضافہ ہوا ہے انہوں نے کہا کہ اس جیسے پروگراموں میں خواتین کی شمولیت میں مزید اضافہ کیا جائے تاکہ خواتین کو خودمختار بنایا جا سکے آسٹریلین ہائی کمشنر نے کہا کہ آسٹریلوی حکومت مختلف شعبوں میں پاکستان کی مدد کر رہا ہے پاکستان کے آم‘ کینو کی دنیا بھر میں مانگ ہے مگر اس کی کوالٹی کو مزید بہتر بنانے کی ضرورت ہے انہوں نے کہا کہ آسٹریلیا رواں سال پاکستان سے آم کی درآمد شروع کر دے گا اس موقع پر وفاقی وزیر فوڈ و سیکیورٹی سکند ر حیات بوسن نے کہا کہ پاکستان اور آسٹریلیا کے مابین دوستانہ تعلقات ہیں، پاکستان سالانہ 10 لاکھ ٹن آم پیدا کرتا ہے جو کہ دنیا کی پیداوار کا 4 فیصد ہے۔

انہوں نے کہا کہ اے ایس ایل پی پروگرام سے دیہاتوں میں غربت کو ختم کرنے میں مدد ملی ہے۔ کینو پاکستان کی اہم فوڈ آئٹم میں آتا ہے پاکستان کینو کی 90 فیصد پیداوار کرتا ہے اور پاکستان کے کینو کی دنیا بھر میں مانگ ہے سکندر خان بوسن نے کہا کہ ڈیری کی مصنوعات کی کوالٹی کو مزید بہتر بنانے کی ضرورت ہے۔(رضوان شاہ)#/s#

مزید : کامرس


loading...