داعش میں شامل غیر ملکی جنگجوؤں میں سب سے بڑی تعداد کا تعلق تیونس سے ہے

داعش میں شامل غیر ملکی جنگجوؤں میں سب سے بڑی تعداد کا تعلق تیونس سے ہے
داعش میں شامل غیر ملکی جنگجوؤں میں سب سے بڑی تعداد کا تعلق تیونس سے ہے

  


نیویارک (نیوز ڈیسک) شام اور عراق میں اپنی خوفناک کارروائیوں سے دہشت برپا کرنے والی شدت پسند تنظیم داعش کے متعلق یہ بات تو پہلے سے مشہور تھی کہ اس میں غیر ملکی جنگجو بھی شامل ہیں لیکن اب یہ تشویشناک انکشاف بھی سامنے آگیا ہے کہ اس تنظیم میں شامل غیرملکیوں کی تعداد ناقابل یقین حد تک زیادہ ہے، اور اہم بات یہ ہے کہ ان جنگجوؤں میں سب سے زیادہ تعداد اسلامی ممالک سے آنے واے جنگجوؤں کی ہے۔ اخبار ’’دی انڈیپنڈنٹ‘‘ کے مطابق امریکی ادارے یو ایس ہوم لینڈ سیکیورٹی کی ایک ذیلی کمیٹی کی تازہ ترین رپورٹ کے مطابق داعش میں شامل غیر ملکی جنگجوؤں میں سب سے بڑی تعداد کا تعلق تیونس سے ہے۔ اس ملک سے تقریباً 5 ہزار جنگجو داعش میں شامل ہوچکے ہیں۔ داعش کے غیر ملکی جنگجوؤں کی دوسری بڑی تعداد کا تعلق سعودی عرب سے ہے جس کے 2275 جنگجو اس تنظیم میں شامل بتائے گئے ہیں، جبکہ 2ہزار جنگجوؤں کے ساتھ اردن تیسرے نمبر پر ہے۔ غیر مسلم ممالک میں سے روس اور فرانس سرفہرست ہیں جن کے بالترتیب 1700 اور 1550 شہری داعش کا حصہ بن چکے ہیں۔ جرمنی اور برطانیہ میں سے ہر ایک کے تقریباً 700 شہری داعش میں شامل ہیں۔ رپورٹ میں اس بات پر سخت تشویش کا اظہار کیا گیا ہے کہ داعش میں شامل ہونے والے غیر ملکی اپنے ممالک میں لوٹ کر بڑے پیمانے پر دہشت گردی کے مرتکب ہوسکتے ہیں، اور خصوصاً مغربی ممالک اس حوالے سے سخت تشویش کے شکار ہیں۔

مزید : راولپنڈی صفحہ آخر


loading...