چین کا تہلکہ خیز اقدام ، متنازعہ ترین علاقے پر ایسی چیزتعمیر کردی کہ امریکہ غصے سے لال پیلاہوگیا

چین کا تہلکہ خیز اقدام ، متنازعہ ترین علاقے پر ایسی چیزتعمیر کردی کہ امریکہ ...
چین کا تہلکہ خیز اقدام ، متنازعہ ترین علاقے پر ایسی چیزتعمیر کردی کہ امریکہ غصے سے لال پیلاہوگیا

  


شنگھائی(مانیٹرنگ ڈیسک)امریکہ اور بھارت کے واویلے کے باوجود چین بحر جنوبی چین کے جزیروں پراپنی تنصیبات میں مسلسل اضافہ کرتا چلا جا رہا ہے۔حال ہی میں چین نے ان جزیروں پر 2روشنی کے مینار(lighthouse)چالو کر دیئے ہیں۔چینی نیوز ایجنسی ژین ہوا کی رپورٹ کے مطابق ہواینگ اور چیگوا نامی روشنی کے دو 164فٹ بلند میناروں کی تکمیل پر وزارت ٹرانسپورٹ نے ایک تقریب کا اہتمام کیا تھا۔ رپورٹ میں بتایا گیا ہے کہ یہ روشنی کے مینار ہواینگ جزیرے پر تعمیر کیے گئے ہیں۔

750چھوٹے چھوٹے جزیروں کا سپریٹلیز(Spratlys)نامی سلسلہ ایک متنازعہ علاقہ ہے۔ چین کے علاوہ تائیوان، ملائیشیا، فلپائن، ویت نام اور برونائی کی طرف سے بھی ان کی ملکیت کا دعویٰ کیا جاتا ہے۔ تقریباً ان تمام جزیروں کی زمین بنجر اور پتھریلی ہے اور ان کے متعلق کہا جاتا ہے کہ یہاں تیل اور قدرتی گیس کے بہت بڑے ذخائر موجود ہیں۔

چین کی طرف سے دعویٰ کیا جاتاہے کہ تقریباً پورے کا پورا بحرجنوبی چین اس کا ہے۔ اس معاملے پر امریکہ اور چین میں کشیدگی کافی عرصے سے بڑھ رہی ہے۔ سب سے زیادہ امریکہ اور فلپائن کی طرف سے ان جزیروں پر چینی تنصیبات کے خلاف تحفظات کا اظہار کیا جاتا ہے۔ان کا کہنا ہے کہ یہ تنصیبات فوجی مقاصد کے لیے بھی استعمال کی جا سکتی ہیں جو دیگر دعویدارممالک اور بحرجنوبی چین میں جہازوں کی آمدورفت کے لیے خطرہ ہو گی اوران متنازعہ جزیروں پر چین کی اجارہ داری قائم ہو جائے گی۔دونوں ملک چین سے مسلسل مطالبہ کرتے آرہے ہیں کہ وہ ان جزیروں پر تنصیبات روک دے۔

دوسری طرف خطے میں امریکہ کی اس بے جا مداخلت پر چین بھی برانگیختہ ہے اور اس کا کہنا ہے کہ بطور خودمختار ملک یہ ہمارا حق ہے کہ ہم اپنے ان جزیروں پر جو تعمیرات چاہیں بنائیں۔ روٹرز کی رپورٹ کے مطابق چین کا کہنا ہے کہ ”جہازرانی “ کی آزادی کے نام پر ہم اپنے علاقے میں کسی بھی قسم کی مداخلت برداشت نہیں کریں گے اور ایسی کسی بھی حرکت کا منہ توڑ جواب دیا جائے گا۔چین کی طرف سے یہ موقف اس وقت سامنے آیا تھا جب امریکہ کی طرف سے اپنا بحری بیڑہ ان جزیروں کے انتہائی قریب بھیجنے کی بات کی گئی تھی۔

مزید : رئیل سٹیٹ


loading...