امریکہ کی وہ ایک چیز جس پر اُسے بے حد فخر تھاوہ بھی چین نے چھین لی، سپر پاور کو بہت پیچھے چھوڑ دیا

امریکہ کی وہ ایک چیز جس پر اُسے بے حد فخر تھاوہ بھی چین نے چھین لی، سپر پاور کو ...
امریکہ کی وہ ایک چیز جس پر اُسے بے حد فخر تھاوہ بھی چین نے چھین لی، سپر پاور کو بہت پیچھے چھوڑ دیا

  

بیجنگ(مانیٹرنگ ڈیسک)دنیا میں دولت کا توازن نئی کروٹ لے رہا ہے اور یورپ سے ایشیاءکی طرف منتقل ہو رہا ہے۔ چین اب تک کئی شعبوں میں امریکہ کو مات دے چکا ہے اور اب اس نے ارب پتی افراد کی تعداد میں بھی امریکہ کو پیچھے چھوڑ دیا ہے۔ نیوز لائن کی رپورٹ کے مطابق شنگھائی کی فرم ”ہورون“ کے ایک سروے کے مطابق چین میں 90 نئے ارب پتی افراد کے سامنے آنے سے یہاں ارب پتی افراد کی کل تعداد 594 ہو گئی ہے جب کہ امریکہ میں ارب پتی افراد کی کل تعداد 535 ہے۔ فرم کے چیئرمین کا کہنا ہے کہ چین کے ارب پتی افراد کی دولت کا تخمینہ 14 کھرب ڈالر لگایا گیا ہے جو کہ آسٹریلیا کے جی ڈی پی کے برابر ہے حالانکہ چین میں افراد کی دولت میں معاشی سست روی اور اسٹاک مارکیٹ میں عدم استحکام کے باوجود اضافہ ہوا ہے۔

’امریکہ اور سعودی عرب مل کر ہمارے خلاف یہ سب خوفناک کام کر نے جار رہے ہیں‘روس نے انتہائی خطرناک بات کہہ دی جان کر پوری دنیا حیران پریشان رہ گئی

رپورٹ کے مطابق زیادہ ارب پتی شہریوں کے لحاظ سے اب تک امریکہ کا شہر نیویارک سرفہرست تھا۔ اب نیویارک سے یہ اعزاز بیجنگ نے چھین لیا ہے۔ سروے میں بتایا گیا ہے کہ اس وقت چین کے دارالحکومت میں ارب پتی افراد کی تعداد 100 ہے جبکہ نیویارک میں 95 ارب پتی افراد ہیں۔ اس فہرست میں چین کا تجارتی مرکز شنگھائی پانچویں نمبر پر ہے۔رپورٹ میں گزشتہ 5 سالوں میں لوگوں کے پاس موجود دولت کو امریکی ڈالروں میں بدل کر سالانہ ''گلوبل رچ لسٹ'' شائع کی گئی ہے، جس کے مطابق گزشتہ ایک سال کے دوران بیجنگ میں 32 جبکہ نیویارک میں صرف 4نئے ارب پتی افراد آئے ہیں۔

مزید :

بین الاقوامی -