پکا لاڑاں‘ ڈاکٹرز کی ملی بھگت سے پولیس ملازمین کا ہسپتال کوارٹرز پر قبضہ

  پکا لاڑاں‘ ڈاکٹرز کی ملی بھگت سے پولیس ملازمین کا ہسپتال کوارٹرز پر قبضہ

  



پکالاڑاں (نامہ نگار)ڈاکٹر زوعملہ کی ملی بھگت سے ہسپتال کوارٹر زپر پولیس ملازمین نے قبضہ کرکے ہسپتال کوارٹرز پولیس کے نجی ٹارچر سیلوں میں تبدیل کردئیے تفصیل کے مطابق دیہی مرکز صحت پکالاڑاں کے ڈاکٹر وملازمین کی ملی بھگت سے پولیس ملازمین نے ہسپتال کے کوارٹر زپر قبضہ کر رکھا (بقیہ نمبر16صفحہ12پر)

ہے جہاں پر جرائم پیشہ اور شریف شہریوں کو پکڑ کر پولیس ملازمین قید رکھتے ہیں اور تشدد کا نشانہ بناتے ہیں جن کوپولیس ملازمین کے مخصوص ایجنٹوں کے ذریعیڈیل کے بعد چھوڑ دیا جاتا ہے ہسپتال کوارٹر پر قابض پولیس ملازمین کی تھانہ پکالاڑاں میں مسلسل اور بار بار تعیناتی کی وجہ سے اور عرصہ دراز سے دیہی مرکز صحت پکالاڑاں میں تعینات مقامی عملہ کی ملی بھگت سے دیہی مرکز صحت کے کوارٹرز کو اپنی ذاتی جاگیر و نجی ٹارچر سیل بنا رکھا ہے ان ملازمین کی مسلسل اور بار بار تعیناتی کی وجہ سے علاقے کے جرائم پیشہ اور جھوٹے مقدمے بازوں کے ساتھ رابطے ہیں اور دیہی مرکز صحت میں عرصہ دراز سے تعینات مقامی ملازمین کی وجہ سے ان کوارٹرز پر قابض پولیس ملازمین یا دیہی مرکز صحت پکالاڑاں کے ملازمین کے خلاف آواز بلند کرنے کی پاداش میں خود ساختہ مدعی بنا کر جھوٹے مقدمات میں پھنسا کر نشان عبرت بنا دیا جاتا ہے اور تو اوردیہی مرکز صحت پکالاڑاں کے کوارٹرز پر قابض پولیس ملازمین کی خبر لگانے کی پاداش میں مقامی صحافی سراج احمد خان پر بھی کچھ عرصہ قبل چوری کا جھوٹا مقدمہ درج کر دیا گیا تھا جس کی وجہ سے شہری خصوصا خواتین ہسپتال میں جانے سے خوفزدہ ہیں شہریوں کا متعلقہ حکام سے نوٹس لینے کا مطالبہ کیا ہے۔

قبضہ

مزید : ملتان صفحہ آخر


loading...