چونیاں میں بچوں کے بہیمانہ قتل کے ملزم کا متاثرہ والدین کے سامنے اقرار جرم 

 چونیاں میں بچوں کے بہیمانہ قتل کے ملزم کا متاثرہ والدین کے سامنے اقرار جرم 

  



قصور (بیورورپورٹ)قصور کی تحصیل چونیاں میں بچوں کو بداخلاقی کے بعد بیدردی سے قتل کرنے والے ملزم سہیل شہزاد کو مقتولین کے والدین کے سامنے الگ الگ پیش کیا گیا۔ملزم نے قتل کی لرزہ خیز تفصیلات والدین کے سامنے بیان کیں۔ تفصیلات کے مطابق پولیس نے چونیاں کیس کے ملزم کو بچوں کے والدین کے سامنے پیش کیا، ملزم نے قتل کی لرزہ خیز وارداتوں سے پردہ اٹھایااور روداد بیان کرتے ہوئے بتایا کہ بداخلاقی اورقتل کی تمام وارداتوں میں اس کے ساتھ کوئی شریک نہیں تھا۔ ملزم نے بتایا کہ بچوں کو بداخلاقی اور قتل کے بعد گڑھے میں پھینک دیتا تھا، جس کے بعد چیل،کوے اور کتے نعشوں کو کھا لیتے،ملزم نے والدین کے سامنے بتایا کہ اچانک اس کے اندر حیوانیت جاگتی تھی اور وہ معصوم بچوں کو شکار کرتا تھا،حیوانیت جاگنے پر جو بچہ بھی سامنے آتا اسے اٹھا کر لے جاتا،بداخلاقی کا نشانہ بنایااور قتل کر کے پھینک دیتا۔پولیس کے مطابق ملزم کی ملاقات مقتولین کے والدین سے آر پی او شیخوپورہ کے آفس میں کرائی گئی۔ جے آئی ٹی ممبر، ایس پی انویسٹی گیشن اور بچوں کے وکیل بھی اس موقع پر موجود تھے۔ بتایا گیا کہ ملزم سہیل پہلے بھی جیل کاٹ چکا ہے اور سزا کے خوف سے بچوں کو  بداخلاقی کے بعد مار دیتا تھا،پولیس کے مطابق ملاقات کا مقصد بچوں کے والدین کا ابہام دور کرنا تھا۔ پولیس کے مطابق چالان پیش کرنے میں تاخیر کی وجہ ڈی این اے ٹیسٹ کی تفصیلی رپورٹ ہے۔ ابتدائی ڈی این اے رپورٹ میں ہڈیاں میچ کر گئیں، تفصیلی رپورٹ کے بعد چالان عدالت میں پیش کر دیں گے۔پولیس کا کہنا ہے کہ بچوں کی 64 ہڈیاں ملیں، ملزم سے رکشہ بھی برآمد کیا گیا ہے اس سے پہلے عدالت نے ملزم کو سات روزہ جسمانی ریمانڈ پر پولیس کے حوالے کر دیا۔عدالت میں پیشی پر ملزم سے جج نے پوچھا تم کچھ کہنا چاہتے ہو تو اس درندے کا کہنا تھا کہ مجھ پر تشدد نہ کیا جائے۔مقامی شادی ھال میں غریب اور نادار پچاس بچیوں کی شادی کی تقریب ہر فیملی کو ایک لاکھ روپے کا گھر کا سامان دیا گیا۔

چونیاں،ملزم

مزید : صفحہ آخر


loading...