برطانیہ کی شہزادی ڈیانا پاکستان کو اپنا گھر کیوں بنانا چاہتی تھیں؟ وہ بات جو آپ کو معلوم نہیں

برطانیہ کی شہزادی ڈیانا پاکستان کو اپنا گھر کیوں بنانا چاہتی تھیں؟ وہ بات جو ...
برطانیہ کی شہزادی ڈیانا پاکستان کو اپنا گھر کیوں بنانا چاہتی تھیں؟ وہ بات جو آپ کو معلوم نہیں

  



لندن(مانیٹرنگ ڈیسک) اپنی والدہ شہزادی لیڈی ڈیانا کے نقش قدم پر چلتے ہوئے شہزادہ ولیم اپنی اہلیہ کیٹ مڈلٹن کے ہمراہ آج پاکستان پہنچ رہے ہیں۔ پاکستان وہ ملک ہے جسے لیڈی ڈیانا نے اپنا گھر بنانے کا خواب دیکھا۔ ڈیلی میل کے مطابق وہ ایک پاکستانی نژاد ڈاکٹر حسنات کی محبت میں گرفتار تھیں اور اس کے ساتھ شادی کرکے ہمیشہ کے لیے پاکستان میں مقیم ہونا چاہتی تھیں تاہم ڈاکٹر حسنات نے ان سے شادی کرنے سے انکار کر دیا۔

لیڈی ڈیانا نے 1996ءمیں پاکستان کا دورہ کیا اور یہاں ایک کینسر ہسپتال گئیں۔ ہسپتال میں ایک 7سالہ مریض بچے کو گود میں لے کر پیار کر رہی تھی کہ فوٹوگرافر نے ان کی ایک تصویر بنا لی۔ یہ تصویر زندگی بھر کے لیے لیڈی ڈیانا کی پسندیدہ ترین چیزوں میں شامل رہی اور ان پر لکھی گئی کئی کتابوں میں مصنفین نے بتایا ہے کہ وہ ہمیشہ اس تصویر کی ایک کاپی اپنے پاس رکھتی تھیں۔ اس بچے کا نام محمد اشرف تھا جو کینسر کا مریض تھا۔ محمد اشرف آنکھوں نابینا تھا اور کینسر جیسے مہلک مرض میں مبتلا، اس کے پاس چند ہفتے کی زندگی باقی بچی تھی۔

شہزادہ ولیم اور کیٹ مڈلٹن کی صورت میں برطانوی شاہی خاندان کے افراد 13سال بعد پاکستان کی زمین پر قدم رکھنے جا رہے ہیں۔ وہ پانچ روز پاکستان میں قیام کریں گے اور ان کا یہ دورہ لیڈی ڈیانا کے پاکستان کے دوروں کی یاد تازہ کر دے گا۔ لیڈی ڈیانا تین بار پاکستان آئی تھیں۔ ایک بار جب وہ ابھی شہزادہ چارلس کی اہلیہ تھیں اور دو بار ان سے طلاق ہونے کے بعد، جب وہ ڈاکٹر حسنات خان کی محبت میں بری طرح گرفتار تھیں۔ آخری دو دوروں میں لیڈی ڈیانا چپکے سے ہوٹل سے نکل کر ڈاکٹر حسنات کے خاندان سے ملنے بھی گئیں۔

مزید : برطانیہ