کیا مولانا فضل الرحمان کو ختم نبوت ﷺ ایشو استعمال کرنا چاہیے؟نیا سروے آگیا

کیا مولانا فضل الرحمان کو ختم نبوت ﷺ ایشو استعمال کرنا چاہیے؟نیا سروے آگیا
کیا مولانا فضل الرحمان کو ختم نبوت ﷺ ایشو استعمال کرنا چاہیے؟نیا سروے آگیا

  



اسلام آباد (ڈیلی پاکستان آن لائن) روشن پاکستان کی جانب سے کرائے گئے تازہ ترین سروے میں یہ بات سامنے آئی ہے کہ مولانا فضل الرحمان کی جانب سے آزادی مارچ میں عقیدہ ختم نبوت ﷺ کا ایشو اٹھانے کے معاملے کو صرف 19 فیصد لوگوں نے درست قرار دیا ہے جبکہ 68 فیصد لوگوں نے اس کی مخالفت کی ہے اور 13 فیصد لوگوں نے اس پر رائے ظاہر نہیں کی۔

روشن پاکستان کی جانب سے 9 سے 13 اکتوبر کے درمیان مولانا فضل الرحمان کے آزادی مارچ پر پاکستانیوں کی سوچ جاننے کیلئے سروے کرایا گیا جس میں 4319 لوگوں کی رائے معلوم کی گئی۔ سروے کے نتائج کے مطابق مولانا فضل الرحمان کی جانب سے عقیدہ ختم نبوت ﷺ کو آزادی مارچ کیلئے استعمال کرنے کے سب سے بڑے حامی مسلم لیگ ن کے کارکن نظر آئے ۔ ن لیگ کے 35 فیصد کارکنوں نے اس معاملے پر کہا کہ مولانا فضل الرحمان کو آزادی مارچ میں عقیدہ ختم نبوت ﷺ کے معاملے کو ضرور اٹھانا چاہیے جبکہ 52 فیصد کارکنوں نے اس کی مخالفت کی۔

سروے میں یہ بات بھی سامنے آئی کہ پی ٹی آئی کا کوئی بھی کارکن نہیں چاہتا کہ مولانا فضل الرحمان آزادی مارچ کیلئے مذکورہ ایشو کو استعمال کریں ۔ پی ٹی آئی کے 94 فیصد کارکنوں نے مولانا فضل الرحمان کی جانب سے عقیدہ ختم نبوت ﷺ استعمال کرنے کی مخالفت کی جبکہ صفر فیصد کارکنوں نے اس کی حمایت کی۔

کیا مولانا فضل الرحمان کو آزادی مارچ میں عقیدہ ختم نبوت ﷺ کا معاملہ اٹھانا چاہیے؟ اس سوال کے جواب میں پیپلز پارٹی کے 12 فیصد کارکنوں نے ہاں میں جواب دیا جبکہ 72 فیصد کارکنوں نے اس کی مخالفت کی۔

مزید : Breaking News /اہم خبریں /قومی /سیاست /علاقائی /اسلام آباد