سوال اُس سے ہمارا کہاں نباہ کا ہے|معین نظامی |

سوال اُس سے ہمارا کہاں نباہ کا ہے|معین نظامی |
سوال اُس سے ہمارا کہاں نباہ کا ہے|معین نظامی |

  

سوال اُس سے ہمارا کہاں نباہ کا ہے

مطالبہ ہے مگر، صرف اک نگاہ کا ہے

ہمیشگی کے مراسم تو دل کو راس نہیں

علاج اس کا وہی ربط گاہ گاہ کا ہے

میں دینِ عشق میں توحید کا جو قائل ہوں

تو معجزہ یہ ترے حسنِ بے پناہ کا ہے

وصال و ہجر سے میں کس کا انتخاب کروں

یہاں پہ خود سے مجھے خوف اشتباه کا ہے

خبر نہیں ہے ابھی اس کی کم نگاہی کو

کہ ایک مرحلہ خود یہ بھی رسم و راہ کا ہے

مؤرخوں کو کسی اور پر نہ شک گزرے

کہ مجھ کو مارنے والا مری سپاہ کا ہے

شاعر: معین نظامی

Sawaal   Uss   Say    Hamaara   Kahan   Nibaah   Ka   Hay

Mutaalba   Hay    Magar   Sirf    Ik   Nigaah   Ka   Hay

 Hamaishgi   K   Maraasam   To   Dil   Ko   Raas   Nahen

Elaaj   Uss   Ka   Wahi   Rabt    Gaah    Gaah   Ka   Hay

 Main   Deen-e-Eshq   Men    Toheed   Ka   Qaail   Hun

To   Mojaza   Yeh   Tiray    Husn-e-Be    Panaah   Ka   Hay

 Visaal -o -Hijr    Say   Main   Kiss   Ka   Intakhaab   Karun

Yahaan   Pe   Khud   Say   Mujhay   Khof   Ishatabaah   Ka   Hay

 Khabar    Nahen   Abhi   Iss   Ki   Kam   Nigaahi   Ko

Keh   Aik   Marhalaa    Khud   Yeh   Bhi   Rasm-o-Raah   Ka   Hay

 Muarrakhon    Ko   Kisi    Aor   Par   Na   Shak   Guzray 

Keh   Mujh    Ko   Maarnay   Waala    Miri   Sipaah   Ka   Hay

 Poet: Moeen   Nizami

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -غمگین شاعری -