ادھورا رہ گیا مجنوں سے اِستفادہ مرا |معین نظامی |

ادھورا رہ گیا مجنوں سے اِستفادہ مرا |معین نظامی |
ادھورا رہ گیا مجنوں سے اِستفادہ مرا |معین نظامی |

  

ادھورا رہ گیا مجنوں سے اِستفادہ مرا 

سو پھر سے دشت کو جانے کا ہے ارادہ مرا 

عجیب شاخ تھی صندل کی مجھ سے کہتی تھی 

بجائے سرمہ لگایا کرو برادہ مرا 

شیخ نگاہ تری حاضری کو چل نکلوں 

ہوائے توبہ سکھا دے اگر لبادہ مرا 

ضرورتوں کی کفالت اسی کے ذمہ ہے 

جسے خیال ہے مجھ سے کہیں زیادہ مرا 

ترے نثار ترے لطف خاص کے قرباں 

کہ تیرے ہاتھ نے رکھا ہے دل کشادہ مرا 

شاعر: معین نظامی

Adhoora   Reh   Gaya   Majnoon   Say   Istafaada   Mira

So   Phir   Say   Dasht   Ko   Jaanay   Ka    Hay   Iraada   Mira

 Ajeeb   Shaakh   Si   Sanndal   Ki   Mujh   Say   Kehti  Thi

Bajaa-e-Surma   Lagaaya    Karo   Buraada   Mira

Shaikh    Nigaah   Tiri    Haazri   Ko   Chall   Niklun

Hawaa-e-Toba     Sikhaa   Day    Agar   Libaada    Mira

 Zaroorton   Ki   Kafaalat   Usi   K    Zimmay   Hay

Jisay    Khayaal   Hay   Mujh   Say   Kahen    Ziyaada   Mira

 Tiray   Nisaar   Tiray   Luf-e-Khaas   K   Qurbaan

Keh   Teray    Haath   Nay   Rakkha    Hay    Dil    Kushaada   Mira

 Poet: Moeen   Nizami

 

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -غمگین شاعری -