شہرِخواب و خبر میں ہم بھی ہیں |ممتاز اطہر |

  شہرِخواب و خبر میں ہم بھی ہیں |ممتاز اطہر |
  شہرِخواب و خبر میں ہم بھی ہیں |ممتاز اطہر |

  

  شہرِخواب و خبر میں ہم بھی ہیں 

اک سخن کے اثر میں ہم بھی ہیں

 اے کہانی ! ہمارے ساتھ بھی چل  

دیکھ ! اگلے سفر میں ہم بھی ہیں

 تم نے دیکھی نہیں جڑیں اس کی  

سبز ہوتے شجر میں ہم بھی ہیں

 کچھ ہمیں بھی نمو سے نسبت ہے  

برگ و گل میں ثمر میں ہم بھی ہیں

  اک ستارہ ہے رو برو اطہر  

جس کی اُجلی نظر میں ہم بھی ہیں  

شاعر: ممتاز اطہر

(ممتاز اطہر کی وال سے)

Shehr-e-Khaab-o-Khaabar   Men   Ham   Bhi   Hen

Ik   Sukhan   K   Asar   Men   Ham   Bhi   Hen

 Ay   Kahaani!  Hamaaray   Saath   Bhi   Chall

Dekh   ,   Aglay   Safar   Men   Ham   Bhi   Hen

 Tum   Nay   Dekhi   Nahen   Jarren   Uss   Ki

Sabz   Hotay   Shajar   Men   Ham   Bhi   Hen

 Kuchh    Hamen   Bhi   Namoo   Say   Nisbat   Hay 

Barg-o-Gull   Men    Samar   Men   Ham   Bhi   Hen

 Ik   Sitaara   Hay   Rubaru   ATHAR

Jiss   Ki   Ujli   Nazar   Men   Ham   Bhi   Hen

 Poet: Mumtaz   Athar

 

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -غمگین شاعری -